تحصیل باڑہ میں طبی سہولیات کا فقدان ،عطائی ڈاکٹر سرگرم

تحصیل باڑہ میں طبی سہولیات کا فقدان ،عطائی ڈاکٹر سرگرم

  

خیبرایجنسی(نامہ نگار) خیبر ایجنسی کی تحصیل باڑہ میں صحت کی سہولیات ناپید جعلی اور ٖغیر معیاری ادویات سمیت اتائی ڈاکٹر زکا دھندہ عروج پر ہے میڈیکل سٹوروں پردو نمبر ادویات کی بھر مار متعلقہ حکام خاموش تماشائی بنے ہوئے ہیں کوئی پرساں حال نہیں،میڈیکل پریکٹیشنرز عوام کے جانوں کے ساتھ کھیل رہے ہیں۔ خیبر ایجنسی کی تحصیل باڑہ کے مختلف علاقوں میں غیر مستند ڈاکٹر ز ، لیڈی ڈاکٹرزاور پیرا میڈیکس نے حالیہ واپسی کرنے والے متاثرین کو دونوں ہاتھوں سے لوٹا جارہاہے پر مسلسل شکایات اور اموات کے باوجود پولیٹیکل انتظامیہ ٹس سے مس نہیں ہورہی ہے ۔ غیر مستند ڈاکٹر ز، لیڈی ڈاکٹرز اور میٹرنٹی ہومز پرغیر قانونی پریکٹس جاری ہے جن کے پاس نہ کوئی رجسٹریشن ہے نہ ہی اِن کی کوئی باقاعدہ چیکنگ کی جاتی ہے ۔ سماجی کارکن حکیم خان آفریدی نے پو لیٹکل انتظامیہ اور ڈرگ انسپکٹر کو ایسے تمام کلینکس اور باالخصوص میٹرنٹی ہومز جن میں نان کوالیفائیڈ سٹاف موجود ہو کے خلاف جلد از جلد قانونی کاروائی کر نے کی اپیل کی ہے اور اِن تمام سنٹرز مالکان اور ڈاکٹرز کو قانون کے کٹہرے میں لاکر اِن کے خلاف کاروائی کرنی چائیے انہوں نے مزید کہا کہ غیر معیاری کمپنیاں ان آتائی ڈاکٹروں کے ذریع اپنے غیر معیاری پروڈکس فروخت کرتے ہیں ایسے کمپنیوں پر پابندی لگائی جائے۔دوسری جانب علاقے کے لوگوں ملک شان اکبر، ملک محمد شفیق اور حاجی نورمحمد نے یہ بھی خدشہ ظاہر کیا ہے کہ بسا اوقات علاقے میں کوئی بھی مرض وبائی شکل اختیار کرلیتاہے لہذا ایسے صورتحال میں اِن کے لئے موبائل ہسپتال اور فری میڈیکل کیمپس کا انعقاد کرنا چاہئے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -