شانگلہ میں سرکاری گاڑیوں کا بے دریغ استعمال ،خزانہ کولاکھوں کا ٹیکہ

شانگلہ میں سرکاری گاڑیوں کا بے دریغ استعمال ،خزانہ کولاکھوں کا ٹیکہ

  

الپوری(ڈسٹر کٹ رپورٹر) شانگلہ میں سرکاری گاڑیوں کا بے دریغ استعمال عروج پر ،نئے سرکاری گاڑیاں کباڑہ بن گئی،حکومتی خزانہ کو لاکھوں کا ٹیکہ،سرکاری گاڑیوں پر ریپئر کے مد میں ماہانہ لاکھوں روپے خرچ ہوتے ہیں، افسران اور اہلکاران گاڑیوں کواپنے ذاتی کاموں کیلئے استعما ل کرتے ہیں، ضلع شانگلہ میں اکثر ضلعی افسران کے ساتھ پانچ پانچ گاڑیاں زیر استعمال ہیں،ضلع کے بعض سرکاری گاڑیاں افسران کے رشتہ داروں کے زیر استعمال ہے اور وہ بھی ضلع سے باہر۔ عوام کامال کو شیر مدر سمجھتے ہیں ،عوامی و سماجی حلقوں کا اظہار برہمی۔ وزیراعلیٰ پرویزخٹک سے نوٹس لینے کا مطالبہ۔ صوبہ خیبر پختونخوا میں پسماندگی کی لحاظ سے سرفہرست اور کرپشن میں درجہ اول کے حثیت رکھنے والی ضلع شانگلہ میں سرکاری گاڑیوں کا ناجائز اور نجی کاموں میں استعمال ہورہے ہیں جو سراسر زیادتی ہے ایک ایک آفسر کے پاس کئی گاڑیاں زیر استعمال ہیں، جو وہ زیادہ تر گھر یلوں اور سکول بچوں کے کاموں کیلئے استعمال کرہے ہیں،شانگلہ کے سرکاری گاڑیاں اکثر باہر کے اضلاع میں دکھائی دیتی ہیں، بلدیاتی نمائندے بھی کسی سے کم نہیں وہ بھی کئی سرکاری گاڑیاں رکھتے ہیں اور اپنے ذاتی کاموں میں استعمال میں لاتے ہیں۔ ضلع کے بعض سرکاری گاڑیاں افسران کے رشتہ داروں کے زیر استعمال ہے اور وہ بھی ضلع سے باہر۔ کھبی بچوں کوسکولوں لے جاتے ہیں تو کھبی بازار سے سودا سلف اور سیر سپاٹے کیلئے گاڑیاں دوڑاتے ہیں نجی تقریبات اور چھٹیوں میں سرکاری گاڑیاں استعمال میں لاتے ہیں کیا یہ کرپشن نہیں ہے ؟سرکاری فیول استعمال کرتے ہیں ٹی اے ڈی اے بھی سرکار سے لیتے ہیں اور کام اپنا کرتا ہے عوامی سماجی حلقوں نے خیبر پختونخوا کی صوبائی حکومت وزیر اعلیٰ پرویز خٹک سے اصلاح احوال کیلئے اقدامات اٹھانے کامطالب ہ کر دیا ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -