اسٹیفن ہاکنگ کی وہیل چیئر لاکھوں ڈالر میں فروخت

اسٹیفن ہاکنگ کی وہیل چیئر لاکھوں ڈالر میں فروخت

واشنگٹن (مانیٹرنگ ڈیسک) ایک بولی میں مشہور سائنس دان اسٹیفن ہاکنگ کی خودکار وہیل چیئر اور ایک مقالہ ایک ملین ڈالر سے زائد رقم میں فروخت کر دیا گیا۔ اس سے حاصل شدہ آمدن دو خیراتی اداروں کو دی جائے گی۔اسٹیفن ہاکنگ کی سرخ خودکار وہیل چیئر کرسٹی نیلام گھر نے تین لاکھ پاؤنڈ ( قر یب چار لاکھ ڈالر) میں فروخت کی جبکہ ان کے ایک مکالے کو اس سے دوگنی رقم میں فروخت کیا گیا۔برطانوی نظریاتی طبعیات دان اور ماہر فلکیات، اسٹیفن ہاکنگ کو کائنات کی ابتدا سے متعلق ان کے کام، وقت کی نوعیت اور ماہیت اور بلیک ہولز سے متعلق ان کے انقلابی نظریا ت کی وجہ سے دنیا بھر میں جانا مانا جاتا تھا۔ ہاگنگ رواں برس مارچ میں 76 برس کی عمر میں انتقال کر گئے تھے۔ ان کی زندگی کا ایک بڑا حصہ موٹر نیورون بیماری کی وجہ سے وہیل چیئر پر گزرا۔اسٹیفن ہاکنگ کی ویل چیئر کو پندرہ ہزار کی بولی کیساتھ نیلام کیلئے پیش کیا گیا تھا، تاہم وہ تین لاکھ پاؤنڈ تک پہنچ گئی۔ اسی طرح سن 1965 میں اسٹیفن ہاکنگ کے لکھے ایک سو ستر صفحاتی مقالے ’پراپرٹیز آف ایکسپینڈنگ یونیو رسز‘ یا ’کائناتوں کے پھیلاؤ کے خواص‘ کو قریب پانچ لاکھ پچاسی ہزار پاؤنڈز میں فروخت کیا گیا۔ اس مقالے کی فروخت کی یہ قیمت اس سے متعلق توقع سے ڈیڑھ لاکھ پاؤنڈز زیادہ ہے۔یہ نیلامی کرسٹی نیلام گھر نے آن لائن کی، جو نو روز تک جاری رہی۔ اس نیلامی کو ’ان دا شولڈ رز آف جائنٹس‘ یا ’یہ دیوقامتوں کے کندھوں پر‘ رکھا گیا تھا۔ اس سے ہونے والی آمدن کو ہاکنگ فاؤنڈیشن اور موٹر نیورون ڈیزیز ایسوسی ایشن کو دی جا رہی ہے۔ ہاکنگ کو آئن اسٹائن کے بعد سب سے زیادہ جانے مانے سائنس دانوں میں شمار کیا جاتا تھا۔ ان کے انتقال پر پوری دنیا سے تعزیت کے پیغامات آ رہے ہیں۔ہاکنگ کی بیٹی لوسی نے کہا ہے کہ اس نیلامی کے ذریعے اسٹیفن ہاکنگ کے چاہنے والوں کو ہاکنگ کے کام اور غیرمعمولی زندگی کی جھلک سے آشنائی ہوئی ہے۔واضح رہے کہ ہاکنگ کو رواں ماہ اس قبرستان میں دفن کیا گیا تھا، جہاں آئزک نیوٹن اور سر جے جے تھامسن جیسے شہرت یافتہ سائنس دان دفن ہیں۔

مزید : صفحہ آخر