پاکستان کی تاریخ میں پہلی بار سکھ یاتری بغیر ویزے داخل ہوئے

پاکستان کی تاریخ میں پہلی بار سکھ یاتری بغیر ویزے داخل ہوئے

  



نارووال(آئی این پی)پاکستان کی جانب سے دنیا بھر کے سکھ برادری کو کرتارپور راہداری کا تحفہ دے دیا گیا، پاکستان کی تاریخ میں پہلی بار سکھ یاتری بغیر ویزے داخل ہوئے۔ تفصیلات کے مطابق پاکستان کی جانب سے دنیا بھر کے سکھ برادری کیلئے کرتارپور راہداری کھول کر تحفظ دیا۔

ے دیا اور تحفے میں پاکستان کی تاریخ میں پہلی بار سکھ یاتریوں کو بغیر ویزے کے پاکستان آنے کی اجازت دی گئی اور پاکستان کی جانب سے کرتارپور کو خطے کے امن اور سکھ مسلم بھائی چارے کی راہداری قرار دیا گیا ہے، سکھوں کی تاریخ کے مطابق کرتارپور میں سکھوں کے پہلے گرونانک دیوجی نے اپنی زندگی کے آخری سال گزارے تھے، گوردوارے میں بابا گرونانک کے زیر استعمال کنواں سری کھو صاحب بھی موجود ہے جبکہ گردوارے کے خدمت گاروں میں سکھ اور مسلمان دونوں شامل ہیں، سکھوں کیلئے گوردوارہ جنم استھان کے بعد کرتارپور گوردوارہ دوسرا مقدس ترین مقام ہے، کرتارپور گوردوارہ کمپلیکس 400ایکڑ پر مشتمل ہے، گوردوارے کے احاطے میں میوزیم لائبریری، لاکر روم، ایمیگریشن سینٹر اور دیگر عمارتیں تعمیر کی گئی ہیں جبکہ گوردوارے کے احاطے میں لنگر خانہ اور یاتریوں کے قیام کے کمرے بھی تعمیر کئے گئے ہیں، دربار صاحب تک آنے کیلئے سکھ یاتری اپنی رجسٹریشن آن لائن پورٹل پر کر سکتے ہیں اور یومیہ 6ہزار یاتری کرتارپور راہداری کا استعمال کر سکیں گے۔

بغیر ویزے

مزید : علاقائی


loading...