جنسی تعلقات کے ذریعے ڈینگی وائرس منتقل ہونے کا پہلا کیس سامنے آگیا

جنسی تعلقات کے ذریعے ڈینگی وائرس منتقل ہونے کا پہلا کیس سامنے آگیا
جنسی تعلقات کے ذریعے ڈینگی وائرس منتقل ہونے کا پہلا کیس سامنے آگیا

  



میڈرڈ(ڈیلی پاکستان آن لائن)اسپین کے محکمہ صحت نے خبردار کیاہے کہ ڈینگی وائرس جنسی تعلقات کے ذریعے دوسروں تک پہنچ سکتا ہے,ہسپانوی محکمہ صحت نے جنسی تعلقات کے ذریعے ڈینگی وائرس سے متاثرہ پہلے کیس کی باضابطہ تصدیق کردی۔محکمہ صحت کے مطابق یہ دنیا بھرمیں اپنی نوعیت کاپہلا کیس ہے جس میں ایک ہم جنس پرست شخص جنسی تعلقات کی وجہ سے اس وائرس سے متاثرہواہے۔

رپورٹ کے مطابق اس کیس سے قبل دنیا بھرمیں صرف یہی تاثرپایاجاتاہے تھا کہ یہ مرض صرف مچھر کے کاٹنے سے ہی لاحق ہوتاہے۔

برطانوی اخبارٹیلی گراف میں شائع رپورٹ کے مطابق متاثرہ شخص کا تعلق میڈرڈ سے جب کہ اس کی عمر 41سال بتائی جاتی ہے،جبکہ جس پارٹنر سے اسے وائرس منتقل ہوا اس شخص کو کیوبا میں ایک مچھر نے کاٹا تھا۔

میڈرڈ کے محکمہ صحت کی ترجمان سوزانا جیمینزے کہتی ہیں کہ یہ کیس روا ں سال ستمبر میں رجسٹرڈ ہواتھا جس پر ڈاکٹرز بھی پریشان ہوگئے تھے کیونکہ مریض کی ہسٹری کے مطابق اس نے کسی ایسے ملک کا سفر نہیں یاتھا جہاں ڈینگی وائرس پایا جاتا ہو۔

ڈاکٹرز نے اس وقت اپنی تشخیص کا زاویہ بدلا جب انہیں معلوم ہوا کہ متاثرہ شخص کے دوست بھی گزشتہ کچھ دنوں سے اسی مرض میں مبتلا تھے اور انہیں کیوبا کے ایک نجی دورے کے دوران مچھر نے کاٹ لیا۔

ترجمان کے مطابق یہ حقائق سامنے آنے کے بعد دونوں کے سپرمز کے ٹیسٹ کئے گئے جس سے پتہ چلا کہ دونوں ایک ہی قسم کے وائرس کا شکارہیں۔ترجمان کے مطابق جنوبی کوریامیں حال ہی میں شائع ہونے والی ایک طبی تحقیق میں اس بات کاامکان ظاہرکیاگیاتھا کہ مرد اور خاتون کی قربت ڈینگی کی منتقلی کا باعث بن سکتی ہے تاہم دومردوں میں اس وائرس کے تبادلے کا یہ انہونا واقعہ ہے۔

ڈینگی وائرس کی اس طرح منتقلی محکمہ صحت سے متعلق محققین کیلئے ایک نیا چیلنج بن گیاہے،ماضی میں ایڈز کو ہی اس حوالے سے خطرناک سمجھا جاتا ہے۔دوسری جانب یورپ میں صحت اور بیماریوں کے نگراں ادارے ای سی ڈی سی کا کہنا ہے کہ وہ اس ساری صورتحال کا جائزہ لے رہے ہیں۔

ایڈیس ای جپٹی نسل کی مادہ مچھر کے کاٹنے سے لاحق ہونے والی یہ بیماری دنیا بھرمیں کئی قیمتی جانیں نگل چکی ہے۔ماہرین کے مطابق یہ مچھر عموما ٹھنڈے اور تاریک مقامات پر پرورش پاتے ہیں۔ایک رپورٹ کے مطابق ڈینگی وائرس کے باعث سالانہ دس کروڑ افراد اس سے متاثرہوتے ہیں جن میں سے دس ہزار لقمہ اجل بن جاتے ہیں

مزید : ڈیلی بائیٹس


loading...