ہماری جان بچاﺅ،غیر قانونی تارکین وطن کی برطانوی پولیس کو کال

ہماری جان بچاﺅ،غیر قانونی تارکین وطن کی برطانوی پولیس کو کال
ہماری جان بچاﺅ،غیر قانونی تارکین وطن کی برطانوی پولیس کو کال

  


لندن (نیوز ڈیسک) ایک روزی وہ ہے جو محنت کرنے والے کو ڈھونڈتی ہے اور دوسرے زاویے سے سب روزی کی تلاش میں سرگرداں نظر آتے ہیں۔ ہر ایک کو پیٹ لگا ہوتا ہے اس لئے کہ وہ محنت کرکے پیسہ کماتے ہیں۔ کمانے کا یہ فرض اس وقت وبال بن جاتا ہے جب کوئی غیر قانونی طریقے اختیار کرتا ہے۔ اکثر اخباروں اور ٹیلی ویژن پر دلخراش مناظر دیکھنے کو ملتے ہیں جس میں ان لوگون کی لاشیں دکھائی جاتی ہیں جو غیر قانونی طریقوں سے سرحد یں پار کرتے ہیں یا ایسے لوگوں کی اس حالت کو دکھاتے ہیں جس میں وہ لاغر اور کئی دنوں کے بھوکے دکھائی دیتے ہیں۔ یہ لوگ اپنے ملکوں کو چھوڑ کر اچھے مستقبل کی فکر میں دیارغیر جاتے ہیں اور یہ سفر غیر قانونی طریقوں سے اختیار کرتے ہیں۔ ایک افسوسناک خبر کے مطابق صبح 9 بجے سی ایم پی جی یعنی سنٹرول موٹروے پولسی گروپ کو 999 پر ایک کال موصول ہوئی جس میں کال کرنے والے نے بتایا کہ ہم 12 افراد موٹروے پر ایک ریفریجریٹر لاری میں چھپ کر سفر کررہے ہیں۔ ہمیں لاری کے کیبن کے ساتھ ملحقہ ریفریجریٹر کے پیچھے چھپایا گیا ہے۔ اس گھٹن زدہ ماحول میں سانس لینا مشکل ہورہا ہے۔ ہماری مدد کی جائے۔ اس کال کے موصول ہونے پر موٹروے کو دونوں اطراف سے بند کردیا گیا اور ریفریجریٹر والی لاری کو روک کر 12 افراد کو بازیاب کرالیا گیا۔ انہیں فوری میڈیکل ایڈ دی گئی۔ پولیس کے مطابق گزشتہ مہینے 13 ایتھوپین باشندوں کو اس وقت حراست میں لیا گیا تھا جب وہ برطانوی سرحد کو عبور کررہے تھے۔ غیر قانونی طریقوں سے سرحد عبور کرنے والوں میں اکثریت صومالیہ، سوڈان اور ایرن ٹینرنوی باشندون کی ہوئی ہے جو شمالی افریقہ سے یورپ میں داخل ہونے کے لئے غیر معروف طریقہ اپناتے ہوئے اپنی جانوں کو خطروں میں ڈال لیتے ہیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس