ٹرمپ کے بعد مائیک پنس کا بھی چین پر امریکی سیاسی نظام میں مداخلت کا الزام

ٹرمپ کے بعد مائیک پنس کا بھی چین پر امریکی سیاسی نظام میں مداخلت کا الزام

  



واشنگٹن (اظہر زمان، بیوروچیف) امریکی نائب صدر مائیک پنس نے چین پرالزام لگایا ہے کہ وہ امریکہ کے سیاسی نظام میں مداخلت کی کوششیں کر ر ہا ہے۔ قبل ازیں اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے صدر ٹرمپ نے گزشتہ ہفتے بھی اسی طرح کا چین پر الزام لگایا تھا ، امریکی نائب صدرکاایک تھنک ٹینک ہڈسن انسٹی ٹیوٹ میں انٹیلی جنس ذرائع کے حوالے سے یہ دعویٰ بھی ہے کہ امریکی انٹیلی جنس کے ایک ذمہ دار افسر نے بتایا ہے چین کی طرف کی طرف سے کی جانیوالی کوششوں کے مقابلے پر روس کی جانب سے کی جانیوالی کوششیں تنکے کے برابر ہیں۔ امریکی نائب صدر نے دعویٰ کیا ہے کہ ان کوششوں کا مقصد صدر ٹرمپ کو سیاسی اعتبار سے گرانا اور ان کا اقتدار ختم کرنا ہے کیونکہ ان کی صدارت چین کو را س نہیں آرہی۔ صدر ٹرمپ نے الزام لگایا تھا چین نومبر میں ہونیوالے وسط مدتی انتخابات کے نتائج پر اثر انداز ہونے کی کوشش کررہا ہے۔ چینی حکمت عملی کا مبینہ مقصد یہ ہے کہ کانگریس کے انتخابات میں ڈیموکریٹک پارٹی کو اتنی اکثریت حاصل ہو جائے کہ وہ صدر ٹرمپ کا مواخذہ کرنے میں کامیاب ہوجائے۔ امریکی نائب صدر نے اپنے خطاب میں بتایا چین کے بارے میں کچھ معلومات انٹیلی جنس نے فراہم کی ہے اور کچھ سرعام دستیاب ہیں۔ انہوں نے الزام لگایا چین کی کمیونسٹ پارٹی امریکہ کے کاروباری اداروں، فلم سٹوڈیوز، تعلیمی اداروں، میڈیا اور دانشوروں کے علاوہ سرکاری حکام کو لالچ یا دباؤ کے ذریعے اپنے مطلب کیلئے استعمال کررہی ہے۔

مائیک پنس

مزید : صفحہ آخر