حکومت جمہوری روایات کے فروغ پر یقین رکھتی ہے، دوست مزاری

حکومت جمہوری روایات کے فروغ پر یقین رکھتی ہے، دوست مزاری

لاہور( نمائندہ خصوصی )ڈپٹی سپیکر پنجاب اسمبلی سردار دوست محمد مزاری نے کہا کہ پاکستان تحریکِ انصاف جمہوری روایات کے فروغ، قومی ادروں کے استحکام اور عوامی خدمت پر یقین رکھتی ہے جس کے لئے پارٹی قائد عمران خان کی قیادت میں جدوجہد جاری ہے ۔انہوں نے کہا کہ کرپشن کا خاتمہ او رکرپٹ عناصر کا احتساب ان کی پارٹی کا مشن ہے اور ماورائے آئین کسی بھی اقدام کو ہر گز قبول نہیں کیا جائے گا۔ اور یہ تاثر کہ پاکستان تحریکِ انصاف کی گورنمنٹ کسی مخصوص پارٹی یا خاندان کو سیاسی انتقام کی نشانہ بنا رہی ہے تو یہ بالکل غلط ہے بلکہ ہر ادارہ آزادہے اور موجودہ حکومت کسی بھی ادارے میں کوئی دخل اندازی نہیں کر رہی ہے۔

اور نہ ہی کرے گی۔ پاکستان تحریکِ انصاف کی حکومت قانون و آئین کی پابند ہے اور آئین کے تابع رہتے ہوئے اپنی تمام تر ذمہ داریاں احسن طریقے سے انجام دیتی رہے گی۔ انہوں نے یہ بات اپنے آبائی علاقہ تحصیل روجھان ، ضلع راجن پور میں منعقد کھلی کچہری میں سائلینِ علاقہ اور بعد میں میڈیا نمائندگان سے گفتگو کرتے ہوئے کہی ۔ڈپٹی سپیکرپنجاب اسمبلی نے کہا کہ صوبہ پنجاب میں سرکاری اداروں کی بہتر پروفارمنس اور عوام کو زیادہ سے زیادہ ریلیف کی فراہمی کے لئے گڈ گورننس پر ہر ممکن توجہ دی جا رہی ہے اور وزیراعظم عمران خان کے وژن کے مطابق سماجی شعبوں میں انقلابی تبدیلیاں لا کر عوام کو تعلیم وصحت سمیت دیگر بنیادی ضروریات کی فراہمی کیلئے لا تعداد منصوبوں پر عمل کیا جا رہا ہے۔جبکہ سابقہ حکمرانوں کی بیڈگورننس اور غلط پالیسیوں کی وجہ سے آج ملک مہنگائی ، غربت ،بے روزگاری اور معاشی ابتری کاشکار ہے۔انہوں نے کہا کہ اب عوام کو مزید بے وقوف نہیں بنایا جاسکتا۔جن قومی مسائل میں وطن عزیز کو الجھانے کی کوشش کی جا رہی ہے اس میں پاکستان تحریک انصارف اصولوں کی جنگ لڑ رہی ہے تاکہ حقیقت عوام کے سامنے لائی جاسکے۔ سابقہ حکمرانوں نے جس بے دردی اور بے رحمانہ طریقے سے ملکی خزانہ لوٹ کر اس ملک کی جڑوں کو کھوکھلا کیا ہے اس کو ٹھیک کرنے میں تھوڑا وقت درکار ہے اور عوام کو چاہیے کہ صبر کا دامن ہاتھ سے نہ چھوڑیں اور ملک کی بہتری اور ترقی کے لیے حکومت کے ساتھ کندھے سے کندھا ملا کر اپنا حصہ ڈالیں ۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ سابقہ دو رِ حکومت میں دےئے ہوئے بلدیاتی نظام میں بے شمار خامیاں تھیں جن کو درست کرنے کیلئے متعددترامیم تجویز کی گئی ہیں اس سلسلے میں میڈیا سمیت سیاسی دانشوروں اور سول سوسائٹی کے نمائندوں سے بھی مشاورت کی گئی ہے۔ اور عنقریب اختیارات اور وسائل کی نچلی سطح تک منتقلی کے لیے نیا بلدیاتی نظام متعارف کرایا جا رہا ہے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1