العزیزیہ کیس: استغاثہ کے آخری گواہ پر جرح جاری

العزیزیہ کیس: استغاثہ کے آخری گواہ پر جرح جاری
العزیزیہ کیس: استغاثہ کے آخری گواہ پر جرح جاری

  


اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن) احتساب عدالت میں قومی احتساب بیورو (نیب) کی جانب سے دائر العزیزیہ مل ریفرنس کی سماعت میں آج استغاثہ کے آخری گواہ محبوب عالم پر جرح کی جارہی ہے۔ سابق وزیراعظم نواز شریف بھی عدالت میں موجود ہیں۔

ریفرنس کی سماعت احتساب عدالت نمبر دو کے جج محمد ارشد ملک کر رہے ہیں۔ وکیل دفاع خواجہ خارث استغاثہ کے گواہ پر جرح کررہے ہیں۔استغاثہ کے گواہ محبوب عالم نے عدالت کو بتایا کہ شریف خاندان کی کمپنیوں کے شیئرز کی تقسیم سے واقفیت رکھنے والے کسی فرد کا بیان قلمبند نہیں کیا گیا،سیکیورٹی اینڈ ایکسچینج کمیشن پاکستان(ایس ای سی پی) سے مہران رمضان ٹیکسٹائل ملز کا ریکارڈ حاصل کیا گیا لیکن مذکورہ مل کے شیئرز کی تقسیم سے واقفیت رکھنے والے کسی فرد کا بیان قلمبند نہیں کیا۔

تفتیشی افسر اور استغاثہ کے گواہ نے معزز عدالت کو بتایا کہ شریف خاندان کی کون سی کمپنیاں بند ہوچکی ہیں اور کون سی آپریشنل ہیں،اس حوالے سے تحقیقات نہیں کیں اور کسی گواہ نے بھی بیان نہیں دیا کہ حسین اور حسن نواز نے ہل میٹل اسٹیبلشمنٹ (ایچ ایم ای) کے قیام میں نوازشریف کی معاونت کی۔محبوب عالم کا کہنا تھا کہ میاں نوازشریف کے قوم اور قومی اسمبلی سے خطاب کی ڈی وی ڈی تیار کرنے والے کا بیان قلمبند نہیں کیا اور انہیں ڈی وی ڈی تیار کرنے والے کا نام بھی معلوم نہیں۔

دوسری جانب ٹرائل کی مدت مکمل ہونے کے بعد احتساب عدالت نے مدت میں توسیع کےلئے ایک بار پھر سپریم کورٹ سے رجوع کر رکھا ہے۔قبل ازیں نواز شریف اور ان کے بچوں کیخلاف ٹرائل مکمل کرنے کی ڈیڈ لائن میں پانچ بار توسیع ہو چکی ہے۔

مزید : قومی /علاقائی /اسلام آباد