نشتر شعبہ فنانس‘ بجٹ تیارنہ ہونے پر انتظامی امور بری طرح متاثر

نشتر شعبہ فنانس‘ بجٹ تیارنہ ہونے پر انتظامی امور بری طرح متاثر

  

ملتان (وقا ئع نگار)نشتر میڈیکل یونیورسٹی و ہسپتال کے شعبہ فنانس کی نااہلی گزشتہ تین ماہ سے سال 2019.20 کا تخمینہ بجٹ تاحال تیار نہ ہو سکا ہے۔جسکی وجہ کئی انتظامی امور بری طرح متاثر ہیں۔مزید برآں کروڑوں روپے کے نجی میڈیسن کمپنیوں کے بلز روک دیئے گئے ہیں۔جسکی وجہ سے(بقیہ نمبر33صفحہ12پر)

وہ شدید پریشانی سے دوچار ہیں۔ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ نشتر میڈیکل یونیورسٹی و ہسپتال کے شعبہ فنانس کے ڈائریکٹر کی نااہلی کی وجہ سے سال 2019۔20 کا تخمینہ بجٹ تاحال تیار نہیں کیا جاسکا ہے۔حالانکہ اسکے کیلئے وی سی نے دیگر متعلقہ تین افراد کو ساتھ اٹیچ کیا ہوا تھا۔مگر اسکے باوجود جنوبی پنجاب کے سب سے ہسپتال اور یونیورسٹی کا بجٹ تیار نہ ہوا ہے۔ذرائع کے مطابق اگر بروقت یہ بجٹ مکمل ہوتا تو منظوری کیلئے سنڈیکیٹ کی میٹنگ میں ممبران کے سامنے رکھا جاتا۔ اس کے علاؤہ ذرائع نے اس بات کا بھی انکشاف کیا ہے نشتر ہسپتال میں میڈیسن سمیت دیگر ٹھیکے داروں کے بلز رکے پڑے ہیں۔جو دفتروں کے چکر لگا لگا کر تھک چکے ہیں مگر شعبہ فنانس ٹس سے مس نہیں ہوتا۔بلکہ صرف اور صرف کمیشن وصول کرنے پر زور دیا ہوا ہے۔جبکہ دوسری جانب نشتر میڈیکل یونیورسٹی و ہسپتال کی انتظامیہ کے مطابق تمام تر الزا مات غلط ہیں۔

امور متاثر

مزید :

ملتان صفحہ آخر -