ڈیرہ محمدی میں غیر قانونی ہاؤسنگ کالونی‘ نیب کا نوٹس‘ تحقیقات شروع

  ڈیرہ محمدی میں غیر قانونی ہاؤسنگ کالونی‘ نیب کا نوٹس‘ تحقیقات شروع

  

ملتان (وقا ئع نگار)غیر قانونی ہاوسنگ سکیموں کے خلاف قومی احتساب بیورو متحرک۔ملتان کے نواحی علاقہ ڈیرہ محمدی میں غیر قانونی ہاوسنگ سکیم کے قیام سے  سرکاری خزانے کو کروڑوں کا نقصان پہنچانے پر نیب ملتان نے کین کمشنر پنجاب واجد علی شاہ اور دیگر افسران کو طلب کرلیا ہے۔جبکہ ملتان (بقیہ نمبر37صفحہ12پر)

کے معروف ڈویلپر خواجہ قطب نے افسران سے ساز باز ہوکر زرعی اراضی پر کنڈونیشن فیس ادا کیے بغیر ہاوسنگ سوسائٹی  بناڈالی۔متاثرین کی درخواست پر نیب نے ایکشن لے لیا۔معلوم ہوا ہے کہ ملتان کے نواحی علاقے ڈیرہ محمدی میں قائم نجی ہاوسنگ سکیم بارے ہوشربا انکشافات سامنے آئے ہیں۔ جس کے مطابق ہاؤسنگ سوسائٹی کے مالک  خواجہ قطب الدین  نے سال 2007ء میں اس وقت کے سب رجسٹرار جتوئی واجد علی شاہ جو کہ ڈی سی او لیہ بھی رہ چکے ہیں۔انہوں نے تحصیلدار جتوئی  نواب فضل محمود اور پٹواری محمد ظفر کے  ساتھ ملی بھگت کرکے دریائے چناب  کی 90 کنال ملکیتی اراضی پہلے ملتان کے علاقے ڈیرہ محمدی میں 80 کنال اراضی کے مالک کے ساتھ تبادلہ  بغرض زرعی کروایا۔بعدازاں اسے مزید رقبے کے ساتھ ملا کر ہاوسنگ سکیم بناڈالی۔تاہم اس کی کنڈونیشن فیس جو کہ کروڑوں میں بنتی ہے ادا نہ کی گئی۔دوسری طرف ہاوسنگ سکیم بھی منظور نہ کروائی گئی جس سے سرکاری خزانے کو کروڑوں روپے کا نقصان پہنچایا گیا۔ ۔نیب ملتان  نے ڈیرہ محمدی میں بننے والی ہاؤسنگ سوسائٹی کے خلاف متعدد شکایات پر تحقیقات شروع کردیں ہیں۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -