17کمرشل بینکوں کو 13ماہ میں خلاف ورزیوں پر ایک ارب 12کروڑ جرمانہ کیا: سٹیٹ بینک

  17کمرشل بینکوں کو 13ماہ میں خلاف ورزیوں پر ایک ارب 12کروڑ جرمانہ کیا: سٹیٹ بینک

کراچی(این این آئی)ملک میں قائم کمرشل بنکوں نے قوانین کی خلاف ورزی کی تو اسٹیٹ بینک آف پاکستان نے ان پر بھاری جرمانے عائد کردیئے۔ سرکاری اعداد وشمار کے مطابق گزشتہ تین ماہ کے دوران 17 کمرشل بنکوں پر ایک ارب 12 کروڑ روپے کے جرمانے عائد کیے گئے ہیں۔رپورٹ کے مطابق ملک میں کام کرنے والے 17 کمرشل بنکوں پر رواں سال کے تین ماہ(جولائی تا ستمبر)کے دوران جو جرمانے عائدکئے گئے ہیں ان کی وجوہات(بقیہ نمبر16صفحہ12پر)

 میں اینٹی منی لانڈرنگ، صارفین کی مطلوبہ معلومات نہ رکھنا، فارن ایکسچینج کے قوانین پرعمل درآمد نہ کرنا اور مطلوبہ احتیاط نہ برتنا شامل ہیں۔ملک کے مرکزی بینک کے مطابق جولائی2019میں چار کمرشل بنکوں پر مجموعی طور پر 18.46 کروڑ روپے کے جرمانے کیے گئے  جب کہ اگست 2019 میں دس کمرشل بینکوں نے 80.50 کروڑ روپے کی رقم جرمانے کی مد میں ادا کی۔رپورٹ کے مطابق ستمبر 2019 میں تین کمرشل بنکوں سے 13.33کروڑ روپے کی خطیر رقم جرمانے کی مد میں وصول کی گئی۔اسٹیٹ بنک آف پاکستان نے جن 17بینکوں پر بھاری مالیت کے جرمانے عائد کیے ان میں بینک آف پنجاب، جے ایس بینک، بینک الحبیب، سنہری بینک، دبئی اسلامک بینک،حبیب بینک، مسلم کمرشل بینک، سلک بینک، بینک الفلاح، الائیڈ بینک، سندھ بینک، سمٹ بینک، حبیب میٹروپولیٹن بینک، عسکری بینک،میزان بینک اور اسلامک بینک شامل ہیں۔

سٹیٹ بینک 

مزید : ملتان صفحہ آخر


loading...