خوشی سے رنج کا بدلہ یہاں نہیں ملتا| فانی بدایونی |

خوشی سے رنج کا بدلہ یہاں نہیں ملتا| فانی بدایونی |
خوشی سے رنج کا بدلہ یہاں نہیں ملتا| فانی بدایونی |

  

خوشی سے رنج کا بدلہ یہاں نہیں ملتا

وہ مل گئے تو مجھ آسماں نہیں ملتا

بتا اے جرسِ دو ر میں کدھر جاؤں

نشانِ گردِ رہِ کارواں نہیں ملتا

مجھے بلا کے یہاں آپ چھپ گیا کوئی

وہ میہماں ہوں جسے میزباں نہیں ملتا

مجھے خبر ہے تیرے تیرِ بے پناہ کی خیر

بہت دِنوں سے دلِ ناتواں نہیں ملتا

کسی نے تجھ کو نہ جانا مگر یہ کم جانا

یہ راز ہے کہ کوئی رازداں نہیں ملتا

مجھے عزیز سہی قدرِدل تمہیں کیوں ہو

کمی تودل کی نہیں دل کہاں نہیں ملتا

دیارِ عمر میں اب قحطِ مہر ہے فانی

کوئی اَجل کے سوا مہرباں نہیں ملتا

شاعر: فانی بدایونی

(مجموعۂ کلام:کلیاتِ فانی؛سالِ اشاعت،1946 )

Khushi   Say   Rranj    Ka   Badla   Yahan   Nahen   Milta

Wo   Mil   Gaey   To   Mujhay   Aasmaan   Nahen   Milta

Bataa   Ay   Jaras -e-Daor   Main   Kidhar   Jaaun

Nishaan-e-Gard-e-Rah-e-Kaarwaan   Nahen   Milta

Mujhay    Bulaa   K    Yahaan    Aap   Chhup    Gaya   Koi

Wo    Maheemaan    Hun    Jisay   Maizbaan   Nahen   Milta

Tujhay    Khabar    Hay   Tairay   Teer-e-Be    Parwaah    Ki   Khair

Bahut    Dinon    Say   Dil-e-Naatwaan     Nahen   Milta

Kisi    Nay   Tujh    Ko    Jaana     Magar    Yeh    Kam   Jaana

Yeh    Raaz    Hay    Keh    Koi    Raazdaan   Nahen   Milta

Mujhay    Azeez    Sahi    Qadr-e-Dil     Tumhen    Kiun   Ho

Kami    To    Dil    Ki    Nahen    Dil    Kahaan   Nahen   Milta

Dayaar-e-Umr    Men    Ab   Qeht -e-Mehr    Hay   FANI

Koi    Ajal   K    Siwaa   Mehrbaan   Nahen   Milta

Poet: Fani   Badayuni

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -