ستمِ گردشِ ایام اُٹھا| فانی بدایونی |

ستمِ گردشِ ایام اُٹھا| فانی بدایونی |
ستمِ گردشِ ایام اُٹھا| فانی بدایونی |

  

ستمِ گردشِ ایام اُٹھا

ہر سحر اُٹھ کے غمِ شام اُٹھا

تم جسے درسے اُٹھا دیتے ہو

آج دنیا سے وہ ناکام اُٹھا

عشق کا ایک قصور اور سہی

موت کے سر سے تو الزام اُٹھا

ابر اُٹھا سمتِ حرم سے زاہد

تو بھی سجادہ اُلٹ، جام اُٹھا

ہل گئی پھر مرے دل کی دنیا

درد پھر لے کے ترا نام اُٹھا

شاعر: فانی بدایونی

(مجموعۂ کلام:کلیاتِ فانی؛سالِ اشاعت،1946 )

Sitam-e-Gardish-e-Ayyaam  Utha

Har    Sahr   Uth   K   Gham-e-Shaam Utha

Tum    Jisay    Dar   Say    Uthaa    Daitay   Ho

Aaj   Dunya   Say   Wo   Nakaam   Utha

Eshq    Ka    Aik    Qasoor   Aor   Sahi

Maot   K    Sar   Say    To   Ilzaam   Utha

Abr   Utha   Samt-e-Haram    Say   Zahid

Tu    Bhi   Sajjaada   Ulat   ,   Jaam   Utha

Hil    Gai    Phir    Miray    Dil    Ki   Dunya

Dard    Phir   Lay    K   Tira   Naam   Utha

Poet: Fani   Badayuni

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -