ہر شکوۂ ناروا کو دیکھا| فراق گورکھپوری |

ہر شکوۂ ناروا کو دیکھا| فراق گورکھپوری |
ہر شکوۂ ناروا کو دیکھا| فراق گورکھپوری |

  

ہر شکوۂ ناروا کو دیکھا

اے عشق تری وفاکو دیکھا

تقدیر سے اب نہیں شکایت

اے دوست تری جفا کو دیکھا

دیکھے کوئی جیسے جاگتا خواب

حسنِ نازک لقا کو دیکھا

اے دردِ فرق اے غمِ دوست

عشقِ صبر آزما کو دیکھا

تاروں کے قلوب جیسے دھڑکیں

رات اُس کی ادا ادا کو دیکھا

ہم نے بھی فراق جان دے کر

اُس ناوکِ بے خطا کو دیکھا

شاعر: فراق گورکھپوری

(مجموعۂ کلام:غزلستان؛سالِ اشاعت،1965 )

Har   Shikwa-e-Narawaa   Ko   Dekha

Ay   Eshq   Tiri   Wafaa   Ko   Dekha

 Taqdeer   Say   Ab    Nahen   Shikaayat

Ay   Dost   Tiri    Jafaa   Ko   Dekha

 Dekhay   Koi   Jaisay   Jaagta   Khaab

Husn-e-Naazuk    Laqaa   Ko   Dekha

 Ay   Dard-e-Firaaq   Ay   Gham-e- Dost

Eshq-e-Sabr   Aazmaa   Ko   Dekha'

 Taaron   K   Quloob   Jaisay   Dharrken

Raat   Uss   Ki    Adaa   Adaa   Ko   Dekha

 Ham   Nay   Bhi   FIRAQ   Jaan   Day   Kar

Uss   Naawak-e-Be   Khataa   Ko   Dekha

 

Poet: Firaq   Gorakhpuri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -