ایک عالم پہ بار ہیں ہم لوگ| فراق گورکھپوری |

ایک عالم پہ بار ہیں ہم لوگ| فراق گورکھپوری |
ایک عالم پہ بار ہیں ہم لوگ| فراق گورکھپوری |

  

ایک عالم پہ بار ہیں ہم لوگ

کس کے دل کا غبار ہیں ہم لوگ

ہم سے شادابیاں حیات کی ہیں

چشمِ خوننابہ بار ہیں ہم لوگ

ہم سے پھوٹی شعائع ِ صبحِ حیات

مطلعِ روزگار ہیں ہم لوگ

ہم نے توڑی ہر ایک قیدِحیات

کتنے بے اختیار ہیں ہم لوگ

اثر دردِ زندگی سے فراق

بے خود و بے قرار ہیں ہم لوگ

شاعر: فراق گورکھپوری

(مجموعۂ کلام:غزلستان؛سالِ اشاعت،1965 )

Aik   Aalam   Pe   Baar   Hen   Ham   Log

Kiss   K    Dil   Ka   Ghubaar   Hen   Ham   Log

 Ham   Say   Shadabiyaan   Hayaat   Ki   Hen

Chashm-e-Khoonnaaba   Baar   Hen   Ham   Log

 Ham   Say   Phooti   Shuaa-e-Subh-e-Hayaat

Matlaa-e-Rozgaar   Hen   Ham   Log

 Ham   Nay   Torri   Har   Aik   Qaid-e-Hayaat

Kitnay   Be Ekhtiyaar   Hen   Ham   Log

 Asar   Dard-e-Zindagi   Say   FIRAQ

Be   Khud -o-Be  Qaraar   Hen   Ham   Log

 Poet: Firaq   Gorakhpuri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -