کیوں بے قرار میری طبیعت ہے ان دنوں| فراق گورکھپوری |

کیوں بے قرار میری طبیعت ہے ان دنوں| فراق گورکھپوری |
کیوں بے قرار میری طبیعت ہے ان دنوں| فراق گورکھپوری |

  

کیوں بے قرار میری طبیعت ہے ان دنوں

بھولی ہوئی اگرچہ وہ صورت ہے ان دنوں

وہ آگ لگ گئی کہ دھواں ہے نہ آنچ ہے

درپردہ اُس نظر کی شرارت ہے ان دنوں

حیرت نہ کر  ، ملول نہ ہو  ، بدگماں نہ ہو

کچھ غیر اہلِ درد کی حالت ہے ان دنوں

میں اس قدر اُداس ، تو اس درجہ مہرباں

اے دوست شکر خوبیِ قسمت ہے ان دنوں

بیٹھے بٹھائے چپ نہیں لگتی تھی یوں تجھے

کیوں کیوں فراق کیا تری حالت ہے ان دنوں

شاعر: فراق گورکھپوری

(مجموعۂ کلام:غزلستان؛سالِ اشاعت،1965 )

Kiun   Beqraar   Meri   Tabeeat   Hay   In   Dino

Bhooli   Hui   Agarcheh   Wo   Soorat   Hay   In   Dino

 Wo   Aag   Lagg   Gai   Keh    Dhuwan   Hay   Na   Aanch   Hay

Darpardah   Uss   Nazar   Ki   Sharaaat   Hay   In   Dino

 Haitrat    Na   Kar  ,  Malool   Na   Ho  ,  Badgumaan   Na   Ho

Kuchh    Ghair    Ehl-e- Dar    Ki   Haalat   Hay   In   Dino

 Main   Iss   Qadar   Udaas   ,  Tu    Iss    Qadar   Mehrbaan

Ay    Dost   Shukr   Khoobi-e-Qismat   Hay   In   Dino

 Baithay   Bithaaey   Chup    Nahen    Lagti   Thi   Yun   Tujhay

 Kiu   Kiun   FIRAQ    Kaya   Tiri   Haalat   Hay   In   Dino

 Poet: Firaq   Gorakhpuri

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -