ڈاکٹر عبدالقدیر خان پاکستان میں ٹرکوں کا کارخانہ  بنانا چاہتے تھے جس کیلئے سرمایہ کار بھی تیار کرلیا لیکن پھر کیا ہوا؟

ڈاکٹر عبدالقدیر خان پاکستان میں ٹرکوں کا کارخانہ  بنانا چاہتے تھے جس کیلئے ...
ڈاکٹر عبدالقدیر خان پاکستان میں ٹرکوں کا کارخانہ  بنانا چاہتے تھے جس کیلئے سرمایہ کار بھی تیار کرلیا لیکن پھر کیا ہوا؟

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) سینئر صحافی مجیب الرحمان شامی کا کہنا ہے کہ پاکستان کے اربابِ اختیار نے ڈاکٹر عبدالقدیر خان مرحوم سے ان کی صلاحیتوں کے مطابق کام نہیں لیا، اگر ان سے کام لیا جاتا تو پاکستان بہت سی ایجادات کرسکتا تھا۔

نجی ٹی وی دنیا نیوز کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے مجیب الرحمان شامی نے ڈاکٹر عبدالقدیر سے متعلق گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ جس وقت نوکیا نے موبائل فون بنا کر اربوں ڈالر کمائے تو میں نے ان سے کہا کہ آپ اتنے بڑے سائنسدان ہیں کیا آپ موبائل فون نہیں بنا سکتے؟ اس پر ڈاکٹر عبدالقدیر نے کہا کہ اگر ملک میں میزائل اور ایٹم بم بن سکتے ہیں تو موبائل فون تو بہت چھوٹی چیز ہے، وہ تو گاڑیاں ، جہاز اور ٹرک بھی بنانا چاہتے تھے لیکن اربابِ اختیار نے ان کی بات نہیں مانی۔

مجیب الرحمان شامی نے ڈاکٹر عبدالقدیر کا ایک واقعہ سناتے ہوئے کہا کہ ڈاکٹر صاحب نے ایک بار ایک بہت بڑے صنعتکار کو پاکستان میں ٹرکوں کا کارخانہ لگانے کیلئے راضی کیا۔ اس کے بعد وہ اس صنعتکار کو لے کر جنرل عارف کے پاس گئے۔ جنرل صاحب نے بڑی آؤ بھگت کی  اور صنعتکار  کو رخصت کرکے ڈاکٹر صاحب کو روک لیا،  اس کے بعد  جنرل عارف نے کہا کہ  ڈاکٹر صاحب آپ کن سرمایہ کاروں کے چکروں میں پڑے ہوئے ہیں، ان کو چھوڑیں۔

سینئر صحافی کا کہنا تھا کہ ہمارے اربابِ اختیار اگر ڈاکٹر صاحب کی صلاحیتوں سے استفادہ کرتے تو بہت سی ایجادات کرسکتے تھے، انہیں کو اس بات کا بڑا افسوس تھا۔

مزید :

علاقائی -پنجاب -لاہور -