سیلاب کے باعث اپوزیشن نے سیاسی سرگرمیاں معطل کردیں ٗلیاقت بلوچ

سیلاب کے باعث اپوزیشن نے سیاسی سرگرمیاں معطل کردیں ٗلیاقت بلوچ


اسلام آباد (اے این این )جماعت اسلامی پاکستان کے سیکریٹری جنرل لیاقت بلوچ نے کہا ہے کہ پنجاب اور آزاد کشمیر میں شدید بارشوں اور سیلاب کی تباہ کاریوں کے پیش نظر اپوزیشن جماعتوں کے سیاسی جرگہ نے اپنی تمام سیاسی سرگرمیاں معطل کردی ہیں اور سیلاب متأثرین کی مدد کے لیے تمام کوششیں مرکوز کردی ہیں۔ اِس وقت لاکھوں کی تعداد میں انسان بڑی تباہی سے دوچار ہیں، لاکھوں مال مویشی ا ور اربوں روپے کے فصلات کا نقصان ہوگیا ہے یہ وقت ہے کہ تمام سیاسی اختلافات اور احتجاج ختم کرکے متأثرین کی مدد کی جائے، سیاست اور جمہوریت میں جمہور اور انسانی اقدار ہی اصل بنیاد ہیں۔لیاقت بلوچ نے کہا کہ بارشوں کی تباہی تو قدرتی قرار دی جاسکتی ہے لیکن دریاؤں میں آنے والے اضافی پانی کو محفوظ رکھنے کی کوئی حکمتِ عملی نہیں دریاؤں کے بند مضبوط رکھنے، ندی نالوں کی بروقت صفائی، ندی نالوں کے گرد ناجائز تجاوزات، ندی نالوں، دریاؤں کے قدرتی بہاؤ کے راستوں میں ناجائز رکاوٹیں دور کرنے کا بندوبست نہیں کیا جاتا۔ حکومتوں کی بدانتظامی، کرپشن، سرکاری محکموں کی ملی بھگت بڑی تباہی کا باعث ہے۔ حکمرانوں اور سرکاری محکموں کی نااہلی، بدانتظامی پوری دُنیا میں پاکستان کی بدنامی کا باعث ہے۔لیاقت بلوچ نے میڈیاکہ نمائندوں سے گفتگو کر تے ہو ئے کہا سیاست میں ضد، انا، ہٹ دھرمی حالات کو بند گلی کی طرف دھکیل دیتی ہے ماضی کے تجربات شاہد ہیں کہ اِس سے آئین، جمہوریت اور جمہور کو ہی نقصان ہوتا ہے۔ عوام غربت، مہنگائی، بے روزگاری، بجلی اور توانائی بحران کا خاتمہ چاہتے ہیں۔ آزادی اور انقلاب مارچ کے کارکنان نے بے مثال استقامت، ایثار اور قربانیوں کا مظاہرہ کیا ہے، اِس سیاسی دباؤ سے یہ ماحول پیدا ہوگیا ہے کہ انتخابات 2013ء کا آڈٹ، الیکشن کمیشن کی تشکیلِ نو، انتخابی نظام کی اصلاح اور سانحۂ ماڈل ٹاؤن کی غیر جانبدارانہ تحقیقات ہوجائیں اور یہ بھی بڑا حاصل ہے کہ تحقیقات سپریم کورٹ کا کمیشن کرے اور ثابت ہوجائے کہ وزیر اعظم اور وزیر اعلیٰ پنجاب براہِ راست ملوث ہیں تو حکومت اور اسمبلیاں رخصت ہونگیں اور نئے انتخابات ہوں گے۔

لیاقت بلوچ

مزید : صفحہ آخر