اوباما ایران کو امریکا کی تباہی کے ذرائع مہیا کررہے ہیں: ڈک چینی

اوباما ایران کو امریکا کی تباہی کے ذرائع مہیا کررہے ہیں: ڈک چینی

واشنگٹن(آن لائن)امریکا کے سابق نائب صدر ڈک چینی نے بڑی طاقتوں کے ایران کے ساتھ جوہری معاہدے کو ''پاگل پن'' قرار دیتے ہو ئے کہا ہے کہ صدر براک اوباما ایران کو امریکا کو تباہی سے دوچار کرنے کے لیے براہ راست مسلح کرنے کے ذمے دار ہوں گے۔امریکی کیبل نیوز نیٹ ورک (سی این این) کی رپورٹ کے مطابق ڈک چینی امریکی انٹرپرائز انسٹی ٹیوٹ میں ایک تقریر کے دورا ن کہا ہے کہ ''اس جوہری سمجھوتے سے ایران کو ایسے ذرائع میسر آئیں گے کہ وہ امریکی سرزمین پر ایک جوہری حملہ کرسکیں''۔انھوں نے کہا کہ ''میں یہ جانتا ہوں کہ دنیا میں ایسی کوئی قوم نہیں ہے جس نے اپنی تباہی کے ذرائع خود ہی ایک ایسی دوسری قوم کے حوالے کردیے ہوں جو اس کی دشمن ہے''۔اس تقریر سے قبل وائٹ ہاؤس نے ڈک چینی کے عراق جنگ سے متعلق انٹرویوز کا ایک مجموعہ منگل کی صبح اپنی ویب سائٹ پر پوسٹ کیا ہے۔اخبار وال اسٹریٹ جرنل میں حال میں ڈک چینی کی بہت جلد منظرعام پر آنے والی کتاب ''غیرمعمولی:دنیا کو ایک طاقتور امریکا کی کیوں ضرورت ہے؟''کا ایک اقتباس شائع ہوا تھا۔انھوں نے اس میں ایران کے ساتھ جوہری معاہدے کا 1938ء4 کے میونخ معاہدے کے ساتھ موازنہ کیا تھا جس کے نتیجے میں دوسری عالمی جنگ چھڑ گئی تھی۔انھوں نے لکھا تھا کہ ''اوباما سمجھوتے سے ایک جوہری ایران کی راہ ہموار ہوگی،مشرق وسطیٰ میں جوہری ہتھیاروں کی دوڑ شروع ہوجائے گی اور اس بات کا بھی زیادہ امکان ہے کہ ہیروشیما اور ناگاساکی کے بعد پہلی مرتبہ جوہری ہتھیار کو استعمال کیا جاسکتا ہے''۔درایں اثناء4 امریکی سینیٹ میں ڈیموکریٹک پارٹی کے قائد ایوان ہیری ریڈ نے ایران کے ساتھ طے شدہ جوہری معاہدے کا دفاع کیا ہے اور کہا ہے کہ ''کانگریس اس کا جائزہ لے سکے گی اور یہ معاہدہ برقرار رہے گا''۔لیکن ان کے اس بیان سے چندے قبل ان کی اپنی جماعت سے تعلق رکھنے والے ایک اور سینیٹر جوزف منخن نے اس معاہدے کی مخالفت اور اس پر اعتراض وارد کرنے کا اعلان کردیا ہے۔اس طرح معاہدے پر معترض ڈیمو کریٹک سینیٹروں کی تعداد چار ہوگئی ہے۔تاہم اڑتیس سینیٹر پہلے ہی اس کی حمایت کا اظہار کرچکے ہیں۔اس صورت میں صدر اوباما کانگریس میں اس معاہدے کی عدم منظوری سے متعلق قرار داد کو ویٹو کرسکیں گے۔

مزید : عالمی منظر