کسان کمیشن کا قیام وزیر اعلیٰ پنجاب کا کارنامہ ہے،میاں زاہد حسین

کسان کمیشن کا قیام وزیر اعلیٰ پنجاب کا کارنامہ ہے،میاں زاہد حسین

کراچی (اکنامک رپورٹر)پاکستان بزنس مین اینڈ انٹلیکچولز فور م وآل کراچی انڈسٹریل الائنس کے صدر ،بزنس مین پینل کے سینیئر وائس چےئر مین اور سابق صوبائی وزیر میاں زاہد حسین نے کہا ہے کہ کسان کمیشن کا قیام وزیر اعلیٰ شہباز شریف کا کارنامہ ہے جس سے صوبے میں زرعی شعبے کو تقویت ملے گی۔ وزیر اعلیٰ نے پانچ ماہ کی ریکارڈ مدت میں یہ کمیشن قائم کر کے دکھا دیا جو دو سال میں زرعی شعبے میں دو سو ارب کی سرمایہ کاری کی نگرانی کرے گا۔

وزیر اعلیٰ کی سربراہی میں کام کرنے والے اس کمیشن میں حکومت کے علاوہ کاشتکار تنظیموں، زرعی صنعتوں، زرعی تعلیم وغیرہ سے وابستہ ماہرین کو نمائندگی دی گئی ہے جو لائق تحسین ہے۔

انھوں نے کہا کہ اس کمیشن کے تحت دو کمیٹیاں بنائی گئی ہیں جو صوبائی زرعی پالیسی بنانے اور چھوٹے کاشتکاروں کی فلاح کا کام کریں گی جو خوش آئند ہے۔ انھوں نے کہا کہ اس اقدام سے کسانوں کے مسائل کافی حد تک حل ہونے کی امید ہے جس سے ملکی ترقی یقینی بنائی جا سکے گی کیونکہ پاکستان کا مستقبل زراعت سے وابستہ ہے۔ ملکی ترقی کے لیئے زراعت کے شعبے کو توجہ دی جا رہی ہے تاہم اس کمیشن میں ریسرچ ماہرین کی شمولیت اور ریسرچ کے لیئے اضافی فنڈ مختص کرنے کی ضرورت ہے تاکہ غذائی قلت کے خطرے کا سدباب کیا جا سکے اورغربت میں کمی آ ئے۔مناسب ریسرچ سے پیداوار بڑھے گی جس سے کسان خوشحال ہو گا ۔ سستی اور متناسب خوراک کا دستیاب ہونا ایک بڑا چیلنج بنتا جا رہا ہے جواضافی اقدامات کا متقاضی اورکاشتکاروں کے لیئے معیار زندگی بلند کرنے کانادر موقع بھی ہے۔انھوں نے کہا کہ زرعی ریسرچ وہ واحد شعبہ ہے جس کا تمام تر فائدہ غریب عوام اور کسانوں کو پہنچتا ہے اوردیہی علاقوں کی غربت میں کمی آتی ہے۔ اکثر ممالک میں زراعت کو توجہ دی جا رہی ہے نہ سرمایہ کاری کا رجحان ہے جو ایک بڑا مسئلہ ہے کیونکہ دنیا کے ستر فیصد غریب کاشتکار ہیں۔ مالیاتی ادارے بھی زراعت میں مناسب سرمایہ کاری سے ہچکچاتے ہیں جو خوراک کی رسد میں کمی اور اسکی زیادہ قیمت کا بڑا سبب ہے۔

مزید : کامرس