طاہرالقادری نے رمضان شوگر مل کے مبینہ 50بھارتیوں کی فہرست جاری کردی

طاہرالقادری نے رمضان شوگر مل کے مبینہ 50بھارتیوں کی فہرست جاری کردی

لاہور(آن لائن )پاکستان عوامی تحریک کے قائد طاہر لقادری نے پریس کانفرنس کے دوران شریف برادران کی شوگر ملوں میں کام کرنیوالے 3سو میں سے 50بھارتی جو انجنیئرز،ٹیکنیشنز،آئی ٹی سپیشلسٹ اور ویلڈرز کے ویزوں پر پاکستان آئے انکی فہرست بمعہ پاسپورٹ نمبر میڈیا کو جاری کر دی ہے ۔انہوں نے انکشاف کیا کہ رمضان شوگر مل سے 3سو سے زائد لیٹر انڈیا میں پاکستانی ہائی کمشنر کو بھجوائے گئے ،جنہیں پولیس رپورٹ اور چیکنگ سے استثنیٰ کی ہدایت کی گئی ۔انہوں نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ 2010 تک پاکستان سے بھارت جانے والے سالانہ سرمائے کی مالیت 10کروڑ روپے تھی ،شریف برادران کی حکومت آنے کے بعد ایک سال میں 470ارب روپیہ سالانہ انڈیا منتقل ہو رہا ہے ۔26نومبر 2015 کو اپیکس کمیٹی میں ایک کور کمانڈر نے کہا کہ پنجاب پولیس دہشت گردوں کے خلاف آپریشن کی صلاحیت نہیں رکھتی ،رینجرز کو آپریشن کی اجازت ملنی چاہیے۔کسی بھی شخص کے ماتھے پر جاسوس نہیں لکھا ہوتا کلبھوشن کے ماتھے پر بھی جاسوس نہیں لکھاہوا تھا ۔50 بھارتیوں کے نام بمعہ پاسپورٹ نمبر اجرا پہلی قسط ہے حکمران تردید کریں دوسری قسط بھی جاری کر دوں گا ۔کیا انڈین انجینئر ز،ٹیکنیشنز،آئی ٹی ایکسپرٹس کو ویزا قوانین اجازت دیتے ہیں؟انڈیا سے آنے والے جاسوس نہیں تو پھر پولیس تصدیق اور رپورٹنگ سے انہیں استثنیٰ کیوں حاصل ہے ؟انہوں نے کہا کہ جرائم کے ثبوت ختم کرنے کیلئے ریکارڈ کو جلا دیا جاتا ہے ۔میٹرو بس ،ایل ڈی اے پلازہ اور نندی پور کے ریکارڈ کو جلایا جا چکا،رمضان شوگر مل کو آگ لگنا معنی خیز ہے اس شوگر مل میں انڈین موجود تھے ۔ انہوں نے کہاکہ شریف فیملی سپیشل انڈین پرسونلزکوخصوصی ویزوں پر بلاتی ہے یہ ملٹی پل ویزے ہوتے ہیں اور مروجہ قوانین کو معطل کر کے لگوائے جاتے ہیں ۔سکیورٹی کے اداروں کو کلیئرنس کے عمل سے الگ رکھا جاتا ہے کیونکہ تمام ادارے انکی مٹھی میں ہیں ۔انہوں نے کہاکہ عوام اور ادارے فیصلہ کریں انہیں پاکستان چاہئے۔

مزید : صفحہ اول