نئے منرل ایکٹ کے تحت محکمہ معدنیات کے قواعد و ضوابط بنانے پر کام تیزی سے جاری

نئے منرل ایکٹ کے تحت محکمہ معدنیات کے قواعد و ضوابط بنانے پر کام تیزی سے جاری

  

پشاور( پاکستان نیوز)خیبرپختونخوا حکومت نے معدنی شعبے کی ترقی و فروغ کے سلسلے میں نئے منرل ایکٹ 2016لانے کے بعدمنرل ٹائٹلز منیجمنٹ ،ادنیٰ و اعلیٰ معدنیات ، نیلامیوں اور دیگر متعلقہ امور کیلئے محکمہ معدنیات کے نئے قواعد و ضوابط کی تیاری پر تیزی سے کام شروع کیا ہے۔ اس سلسلے میں صوبائی وزیر معدنی ترقی انیسہ زیب طاہرخیلی کی زیرِ صدارت ان کے دفتر میں نئے منرلز رولز کی تیاری کے سلسلے میں ایک اجلاس منعقد ہوا جس میں سیکرٹری معدنیات سید عبدالجبار شاہ اور ڈائریکٹر پلاننگ سید بلا ل خسرو کے علاوہ ڈی جی معدنیات ، چیف کمشنر مائنز، چیف انسپکٹر مائنز و دیگر متعلقہ حکام نے شرکت کی جبکہ ریٹائرڈسینئر بیوروکریٹ حفظ الرحمان نے نئے رولز کی تیاری میں اپنی تجاویز فراہم کیں۔اجلا س میں منرلز ڈویلپمنٹ ڈیپارٹمنٹ میں ادنیٰ و اعلیٰ معدنیات، معدنیات کی نیلامیوں ، منرل ٹائٹلز منیجمنٹ کمیٹی کی ذمہ داریوں ، معدنیات کی گرانٹنگ و اگریمنٹ اور دیگر ضروری امور کیلئے نئے ایکٹ 2016کے تحت نئے قواعد و ضوابط بنانے کے سلسلے میں تجاویز پر غورو غوض ہوا۔ اجلاس میں صوبائی وزیر معدنی ترقی انیسہ زیب طاہرخیلی نے کہا کہ نئے قواعد و ضوابط کو آسان اور سہل بنایا جائے گا تاکہ محکمہ کے امور کے بارے میں کسی بھی قسم کی معلومات کے بارے میں کسی کو دقت نہ ہو۔ انہوں نے کہا کہ معدنی شعبے میں سرمایہ کاری کے خواہشمند لوگوں کے لئے پورے طریقہ کار کو آسان بنایا گیا ہے اور لیزوں کی گرانٹنگ کا طریقہ کار بھی انتہائی شفاف بنایا گیا ہے تاکہ اس شعبے میں سرمایہ کاری کیلئے اہل اور اچھے لوگ آجائیں ۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے محکمہ معدنیات کو 2.2بلین تک ریونیو حاصل کرنیکا ہدف دیا ہے جس کو ہر حالت میں حاصل کرنے کی کوشش کی جائیگی ۔ انہوں نے مزید کہا کہ اس شعبے میں سرمایہ کاری کیلئے بیرونی سرمایہ کاروں کو راغب کیا جا رہا ہے اور اس سلسلے میں محکمہ اور صوبے کے معدنی شعبے کے متعلق تمام تفصیلات آن لائن موجود ہیں اور سرمایہ کاروں کو ون ونڈو اپریشن کے تحت تمام سہولیات میسر ہونگیں۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -