شائع شدہ خبر کی تردید کرتے ہیں ،ترجمان ڈپٹی کمشنر

شائع شدہ خبر کی تردید کرتے ہیں ،ترجمان ڈپٹی کمشنر

  

پشاور( پاکستان نیوز)محکمہ خوراک حکومت خیبر پختونخوا کے ترجمان نے مقامی روزنامہ میں شائع ہونے والی اس خبر کی سختی سے تردید کی ہے جس میں یہ تا ثر دیا گیا ہے کہ ڈیرہ اسماعیل خان میں ناقص گندم کی خریداری کی گئی ہے ۔ترجمان نے ڈپٹی کمشنر ڈیرہ اسماعیل خان سے منسوب اس خبر کی بھی تردید کی ہے کہ ضلعی انتطامیہ نے گندم کی خریداری کے عمل پر تحفظات ظاہر کئے ہیں ۔ترجمان نے مزید کہا کہ دراصل گندم کی خریداری کے عمل کو شفاف بنانے کے لئے محکمہ خوراک نے امسال گندم خریداری پالیسی کا با قاعدہ اجرا ء کیا ہے جس کی روح سے ضلعی سطح پر گندم کی خریداری کے لئے کمیٹیاں مقرر کی گئیں ہیں جن میں محکمہ زراعت، ضلعی انتظامیہ فلور ملز ایسو سی ایشن حتیٰ کہ نیب اور محکمہ انسداد رشوت ستانی کو بھی بطور مبصر نمائندگی دی گئی ہے ۔ علاوہ ازیں ڈویژنل اور ڈائریکٹریٹ کی سطح پر با قاعدہ مانیٹرنگ کا نظام بھی موجود ہے محکمانہ طور پر ڈی آئی خان کے گوداموں سے گندم کے نمونے لیبارٹری ٹیسٹ کے لئے پہلے سے ارسال کئے جا چکے ہیں جسکی بنیاد پر گندم کے معیار کا تعین کیا جا سکے گا۔ نیز ڈپٹی کمشنر ڈیرہ اسماعیل خان سے رابطہ کرنے پر معلوم ہوا کہ انہوں نے اس ضمن میں اپنے کوئی تحفظات ظاہر نہیں کئے کیونکہ یہ تیکنیکی معاملہ ہے جس کو لیبارٹری ماہرین ہی واضح کر سکتے ہیں ۔ ترجمان نے یہ بھی وضاحت کی کہ کچھ مفاد پرست عناصر جن کی گندم غیر معیاری ہو نے کی بنا پر مسترد کی گئی ہے اور محکمہ کے کچھ افسران کے خلاف سخت تادیبی کاروائیاں عمل میں لائی گئی ہیں جس کے باعث وہ غلط بیانی کے ذریعے محکمہ کو بد نام کرنے کی ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں گندم کی خرید اری کے عمل سے صوبے کو گزشتہ تین سالوں کے دوران ساڑے پانچ ارب روپے کا ریکارڈ فائدہ ہوا ہے جو قابل تحسین ہے۔ ترجمان نے یہ بھی بتایا کہ صوبے میں سینئر مینجمنٹ کورس اور نیشنل مینجمنٹ کورس پر اس وقت تقریبا تیرہ افسران گئے ہوئے ہیں جسکی وجہ سے انتظامی امور چلانے کیلئے حکومت نے متعدد افسران کو دوہری ذمہ داریاں سونپی ہوئی ہیں جن کا منفی تا ثر دینا حقیقت کے منافی ہے۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -