کینیا میں مسلمان طالبات کو عیسائی سکولوں میں حجاب پہن کر جانے کی آزادی مل گئی ،کئی سالوں سے عائد پابندی ختم

کینیا میں مسلمان طالبات کو عیسائی سکولوں میں حجاب پہن کر جانے کی آزادی مل ...
کینیا میں مسلمان طالبات کو عیسائی سکولوں میں حجاب پہن کر جانے کی آزادی مل گئی ،کئی سالوں سے عائد پابندی ختم

  


جوہانسبرگ (مانیٹرنگ ڈیسک) افریقی ملک کینیا میں مسلم طالبات کے عیسائی سکولوں میں حجاب پہن کر جانے پر لگی پابندی ہٹا دی گئی ہے، مسلم طالبات اب عیسائی سکولوں میں حجاب پہن کر جا سکتی ہیں۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق اس پابندی کا خاتمہ کینیا کی ایک عدالت نےمسلم طالبات کی جانب سے دائر مقدمے کا فیصلہ سناتے ہوئے کیا ، عدالت کا کہنا تھا کہ تعلیمی اداروں کوتعصب اور تفریق کی حوصلہ شکنی والے اصولوں کو اپنانا چاہیے۔قابل ذکر ہے کہ کینیا کے ڈواڈاب شہر میں گرجا گھر کی ا مداد سے چلنے والے ایک سکول نےکچھ سال قبل مسلم طالبات پر سکول کی وردی کے ساتھ حجاب پہننے پر پابندی لگا دی تھی۔عدالت کے فیصلے کے بعد کینیا میں مقیم مسلمان گھرانوں میں خوشی کی لہر دوڑ گئی ہے اور انہوں نے عدلیہ کے فیصلے کو سراہا ہے ۔دوسری طرف حجاب پر پابندی عائد کرنے والے سکول کی انتظامیہ  کی دلیل تھی کہ مسلمان بچیوں کے حجاب پہننے سے  طالبات کے درمیان دوری اور عدم رواداری پیدا ہوتی ہے۔

واضح رہے کہ کینیا کے سرکاری سکولوں میں مسلم  طالبات کے حجاب پہننے پر پابندی نہیں ہے۔ اب کینیا کے عیسائی سکولوں کو سرکاری سکولوں جیسی پالیسی اختیار کرنی ہوگی۔ کینیا میں 11 فیصد مسلمان اور 83 فیصد عیسائی آبادی ہے۔

مزید : بین الاقوامی