کرپشن بے نقاب ہونے کے باوجود اقتدار کے ایوانوں میں براجمان رہنے والوں نے ڈھٹائی اور ہٹ دھرمی کی بدترین مثال قائم کی ہے:سینیٹر سراج الحق

کرپشن بے نقاب ہونے کے باوجود اقتدار کے ایوانوں میں براجمان رہنے والوں نے ...
کرپشن بے نقاب ہونے کے باوجود اقتدار کے ایوانوں میں براجمان رہنے والوں نے ڈھٹائی اور ہٹ دھرمی کی بدترین مثال قائم کی ہے:سینیٹر سراج الحق

  


لاہور(نیوز ڈیسک)امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ کرپشن بے نقاب ہونے کے باوجود اقتدار کے ایوانوں میں براجمان رہنے والوں نے ڈھٹائی اور ہٹ دھرمی کی بدترین مثال قائم کی ہے ۔جن لوگوں کے نام پانامہ لیکس میں آئے تھے انہیں شفاف تحقیقات تک اپنے عہدوں سے الگ ہوجانا چاہئے تھا۔جب تک کسانوں کو جاگیروں اور مزدوروں کو کارخانوں کی آمدن میں شریک نہیں کیا جاتا مزدوروں اور کسانوںکے معاشی حالات بہتر نہیں ہوسکتے۔

تفصیلات کے مطابق امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ کرپشن بے نقاب ہونے کے باوجود اقتدار کے ایوانوں میں براجمان رہنے والوں نے ڈھٹائی اور ہٹ دھرمی کی بدترین مثال قائم کی ہے ان خیالات کا اظہار انہوں نے منصورہ میںکسان بورڈ پاکستان کے نئے صدر نثار احمد ایڈووکیٹ اور نئے سیکرٹری جنرل ارسلان خان خاکوانی کی تقرری اور سبکدوش ہونے والے سابق صدر صادق خان خاکوانی کے اعزاز میں منعقدہ تقریب کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے کیا۔

جماعت اسلامی کے رہنماءمولانا اللہ داد نظامی انتقال کرگئے

سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ حکومت سے ہر شعبہ زندگی سے تعلق رکھنے والے لوگ بری طرح مایوس اور ناامید ہوچکے ہیں ،کسانوں ،ڈاکٹروں ،اساتذہ اور مزدوروں سمیت زندگی تمام طبقات کے لوگ اپنے مسائل کے حل کیلئے آئے روز سڑکوں پرسراپا احتجاج ہوتے ہیں مگر حکمران سب اچھا کی گردان الاپ رہے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ حکمران کسان پیکج کا اعلان کردیتے ہیں اور بعد میں اس پر عمل درآمد کا جائزہ نہیں لیاجاتا ۔سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ قابل کاشت زمینوں میں اضافہ کیلئے جنوبی پنجاب اور ملک کے دیگر حصوں میں پڑی ہوئی بے آباد اور بنجر سرکاری زمین کے مالکانہ حقوق ان زمینوں کو آباد کرنے والوں کو دے دیئے جائیں اور ان علاقوں تک نئی نہروں کی کھدائی کی جائے تاکہ ملک کو خوراک میں خود کفیل بنایا جاسکے ۔

انہوں نے کہا کہ زمینوں کا ریکارڈ کمپیوٹرائزڈ کرنا قابل ستائش ہے مگر جن لوگوں کی زمینوں پر سال ہا سال سے جاگیرداروں اور وڈیروں نے قبضہ کررکھا ہے ان کی فریاد بھی سنی جائے ۔انہوں نے کہا کہ ایسے قابضین کے خلاف قانون حرکت میں اس لئے نہیں آتا کہ یہ لوگ خود اقتدار کے ایوانوں میں بیٹھے ہوئے ہیں۔ موجودہ حالات میں اعلان کردہ مراعات سے صرف حکومتی ایوانوں سے وابستہ افرادہی استفادہ کر سکیں گے ۔ہمارا مطالبہ ہے کہ کسانوں کو بلا سود قرضے مہیا کئے جائیں ۔

مزید : قومی