ہٹیاں بالا،10سالہ بچے پر اغوا کے بعد گرم سلاخوں سے تشدد ،جسم لہو لہان

ہٹیاں بالا،10سالہ بچے پر اغوا کے بعد گرم سلاخوں سے تشدد ،جسم لہو لہان

مظفرآباد(بیورورپورٹ)ہٹیاں بالا کے نواحی علاقہ چکار کے گاؤں بھاگسر میں10سالہ بچے کو اغواء کرنے کے بعد لوہے کی سلاخوں کو گرم کرکے جسمانی تشدد ،لوہے کی تروں سے جسم لہو لہو پولیس ملزمان کی پشت بان گئی ہے تھانہ چکار میں رپورٹ درج کروانے کے لیئے جانے والے بچے کے والد سے بدتمیزی گالم گلوچ متاثرہ والد راشدحسین فردیاد لیئے صحافیوں کے پاس پہنچ گیا راشدحسین نے کہا کہ اس کے دس سالہ بیٹے ارباز حسین جوکہ سراں ہائی سکول میں کلاس چہارم کا سٹوڈنٹ ہے دادی کے کہنے پر پانی لگانے گیا راستے میں کھڑی گاڑی سے ہاتھ لگانے پر سراج نامی شخص اور اس کی بہن اورخاندان کے لوگوں نے بچے کو اغواء کرلیا دو گھنٹے تک مسلل حبس بے جاء میں رکھا اورمعصوم کلی پر لوہے کی سلاخوں،چھریوں کو گیس کی آگ پر گرم کرکے چہرے،پاؤں ،ہاتھوں کوداغتے رہے جس سے اس بچے کا جسم درد سے کرا رہا ہے دوگھنٹے کے بعد عوام علاقہ کے تعاون سے بچے کو بازیاب کریا تین دن سے تھانہ چکار میں اورارباب اختیار کے پاس چکر لگا کر تنگ آچکا ہوں میرے بیٹے کو انصاف نہ ملا تو خودوسوزی کرلوں گا بتایا جائے کہ کیا انساف غریب آدمی کے لیئے نہیں ہے ایک غریب شخص ہوں ملزمان بااثر ہیں مجھے دھمکیاں دی جارہی ہیں تھانہ چکار میں رپورٹ درج کروانے گیا تو ایس ایچ او نے بدتمیزی کی اور گالم گلوچ کی کیا انصاف لینے کے لیئے جانے والے سائل کے ساتھ ایسا سلوک کیا جائے گا ؟جس گاڑی کے ساتھ بچے نے ہاتھ لگایا وہ بھی ہماری فیملی کی تھی بتایا جائے کس جرم کے تحت طالم افراد نے میرے بچے پر جسمانی تشدد کیا بچوں کے حقوق کے لیئے کام کرنے والی تنظمیں وزیراعظم،صدر،چیف سیکرٹری،آئی جی،ڈی سی،ایس پی مجھے انصاف دلائیں اگر ملزمان کے خلاف مقدمہ درج نہ ہوا تو خودسوزی کرلوں گا۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر