سیالکوٹ میں بھی پنجاب پولیس کے اہلکاروں کا مسیحی خواتین پر تشدد کا انکشاف، بڑی سزا مل گئی

سیالکوٹ میں بھی پنجاب پولیس کے اہلکاروں کا مسیحی خواتین پر تشدد کا انکشاف، ...
سیالکوٹ میں بھی پنجاب پولیس کے اہلکاروں کا مسیحی خواتین پر تشدد کا انکشاف، بڑی سزا مل گئی

  



سیالکوٹ(ویب ڈیسک )مسیحی برادری کی عورتوں کو تشدد کا نشانہ بنانے پر تھانہ کوٹلی لوہاراں کے 2 تھانیدار وں کے خلاف مقدمہ درج کرکے انکوگرفتار کر لیا گیا جبکہ ایس ایچ او کو شوکاز نوٹس جاری کر دیا گیا۔ روزنامہ دنیا چند روز قبل تھانہ کوٹلی لوہاراں سیالکوٹ میں تعینات اے ایس آئی نوید ارشد باجوہ اور شاہد گھمن نے 5 کانسٹیبلوں کے ہمراہ مقدمہ میں مطلوب پطرس نامی ملزم کو گرفتار کرنے کیلئے پکاگڑھا سیالکوٹ میں چھاپہ مارا تو ملزم کی عدم موجودگی پر گھر میں موجود خواتین کو پکڑ کر تھانہ لے گئے جس پر لواحقین نے احتجاج کرتے ہوئے کشمیر روڈ کو ٹریفک کے لئے بند کر دیا تھا جس پر پولیس نے خواتین کو چھوڑ دیا متاثرین نے آئی جی پنجاب کو درخواست دی جسکی ہدایات پر ڈی پی او سیالکوٹ نے انکوائری کی۔ترجمان ڈی پی او آفس نے دنیا کو بتایاکہ ابتدائی طورپردونوں تھانیداروں سمیت ریڈ میں حصہ لینے والے اہلکاروں کو قصور وار پایا گیا جن کے خلاف ڈپی پی او کی جانب سے مقدمہ درج کرکے گرفتار کرنے کی کارروائی کی سفارش کی گئی تھی۔ دونوں اے ایس آئی اور 5 کانسٹیبلوں کو معطل کرکے مقدمہ درج کر لیا گیا اور گرفتار کرکے تھانہ سول لائن کی حوالات میں بند کر دیا گیا۔

مزید : علاقائی /پنجاب /سیالکوٹ


loading...