ملزم کی پیرول پر رہائی‘ ہتھکڑی سمیت والد کے جنازے میں شرکت

 ملزم کی پیرول پر رہائی‘ ہتھکڑی سمیت والد کے جنازے میں شرکت

  

 وہاڑی(بیورورپورٹ،نامہ نگار)نواحی گاؤں 56ڈبلیوبی کے افتخاراحمدنے ہتھکڑی سمیت باپ کی نمازجنازہ اداکی،چارپائی کوکندھادیااورلگی ہتھکڑی کے ساتھ ہی قبرپرمٹی ڈالی لواحقین اورجنازہ کے شرکاء اپنے پیارے کی موت کادکھ بھول گئے جبکہ ہرآنکھ ہتھکڑی لگے بیٹے کو(بقیہ نمبر38صفحہ 6پر)

باپ کے جنازہ میں دیکھ کراشک بارہوگئی۔ تفصیل کے مطابق نواحی گاؤں 56ڈبلیوبی کے رہائشی ملک منظورحسین ایڈووکیٹ گزشتہ روزوفات پاگئے تھے مرحوم کاایک بیٹاافتخاراحمدمبینہ طورپرمنشیات کے مقدمہ میں زیردفعہ9سی جیل میں قیدہے والد کی وفات پرجنازہ میں شرکت کیلئے عدالت میں پیرول پررہائی کیلئے درخواست دی گئی توعدالت نے پیرول پررہائی کے احکامات جاری کردیئے توپولیس تھانہ ٹھینگی ڈسٹرکٹ جیل سے ہتھکڑی ڈال کروالدکے جنازہ کیلئے گاؤں لے گئی لیکن جنازہ کی ادائیگی،چارپائی کوکندھااورقبرپرمٹی ڈالنے کیلئے بھی ہتھکڑی نہ کھولی گئی اس صورتحال کودیکھتے ہوئے ہرآنکھ اشک باردکھائی دی رشتہ داروں کاکہناتھاکہ ملک منظورحسین ایڈووکیٹ کی موت کاصدمہ بہت بڑاصدمہ ہے لیکن باپ کے جنازہ پربیٹے کاہتھکڑی سمیت شریک ہونااس سے بھی بڑاصدمہ بن کرسامنے آیاہے لوگوں کاکہناتھاکہ پولیس اگرچاہتی توہتھکڑی کھول کرجنازہ میں شامل ہونے کی اجازت دے سکتی تھی لیکن پولیس نے ہٹ دھرمی کامظاہرہ کیالوگوں نے الزام لگایاکہ افتخاراحمدکومنشیات کے جھوٹے مقدمہ میں ملوث کیاگیاہے جس کے صدمہ کی وجہ سے ملک منظورحسین کی موت واقع ہوئی ہے انہوں نے پولیس کے رویہ کی شدیدالفاظ میں مذمت کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان،چیف جسٹس آف پاکستان سے نوٹس لینے کامطالبہ کیاہے۔

شرکت

مزید :

ملتان صفحہ آخر -