وہ آ کے خواب میں تسکینِ اضطراب تو دے

وہ آ کے خواب میں تسکینِ اضطراب تو دے
وہ آ کے خواب میں تسکینِ اضطراب تو دے

  

وہ آ کے خواب میں تسکینِ اضطراب تو دے

ولے مجھے تپشِِ دل، مجالِ خواب تو دے​

کرے ہے قتل، لگاوٹ میں تیرا رو دینا

تری طرح کوئی تیغِ نگہ کو آب تو دے​

دِکھا کے جنبشِ لب ہی، تمام کر ہم کو

نہ دے جو بوسہ، تو منہ سے کہیں جواب تو دے​

پلا دے اوک سے ساقی، جو ہم سے نفرت ہے

پیالہ گر نہیں دیتا، نہ دے، شراب تو دے​

اسد! خوشی سے مرے ہاتھ پاؤں پُھول گئے

کہا جو اُس نے،ذرا میرے پاؤں داب تو  دے

شاعر:مرزا غالب

Wo Aa K Khaab Men Taskeen e Iztaraab To Day

Wo Mujay Tapash e Dil Majaal e Khaab To Day

Karay Hay Qatl Lagaawat Men Tera Ro Dena

Teri tarah Koi Taigh Nigah Ko Aab To day

Dikha  K Junbish e Lab Tamaam Kar Ham Ko

Na Day Jo Bosa To Munh Say Jawaab To Day

Pilaa Day Oak Say Saaqi, Jo Ham Say Nafrat Hay

Payaala Gar  Nahen Deta ,Na Day, Sharaab To Day

ASAD, Khushi Say Miray Haath Paaon Phool Gaey

Kaha Jo Uss Nay Zara Meray Paaon Daab To Day

Poet:Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -