تپش سے میری وقفِ کشمکش ہر تارِ بستر ہے

تپش سے میری وقفِ کشمکش ہر تارِ بستر ہے
تپش سے میری وقفِ کشمکش ہر تارِ بستر ہے

  

تپش سے میری وقفِ کشمکش ہر تارِ بستر ہے

مِرا سر رنجِ بالیں ہے، مِرا تن بارِ بستر ہے

سرشکِ سر بہ صحرا دادہ، نورالعینِ دامن ہے

دلِ بے دست و پا افتادہ ، برخوردارِ بستر ہے

خوشا!اقبالِ رنجوُری عیادت کو تم آئے ہو

فروغِ شمعِ بالیں ، طالعِ بیدارِ بستر ہے

بہ طوُفاں گاہِ جوشِ اِضطرابِ شامِ تنہائی

شُعاعِ آفتابِ صُبحِ محشر تارِ بستر ہے

ابھی آتی ہے بُو بالش سے اُس کی زُلفِ مشکیں کی

ہماری دِید کو خوابِ زُلیخا، عارِ بستر ہے

کہوں کیا، دِل کی کیا حالت ہےہجرِ یار میں، غالبؔ

کہ بیتابی سے ہر یک تارِ بستر، خارِ بستر ہے

شاعر: مرزا غالب

Tapish Say Meri Waqf e Kashmakash  Har Taar e Bistar Hay

Mira Sar Ranj e Baleen  Hay Mira Tan e Baar e Bistar Hay

Sar Shak Sar Ba Sehra  Dada, Noorulain Daman  Hay

Dil e Be Dast o Paa Uftaada, BarkhurDaar e Bistar Hay

Khosha Iqbal e Ranjoori , Ayaadat Ko Tum Aaey Ho

Farogh e Shama e Baalen Taalay  Bedaar e Bistar Hay

Ba Tufaan Gaah e Josh e Iztaraab e Shaam  e Tanhaai

Shuaa e Aftaab e Subh e Mehshar  Taar e Bistar Hay

Abhi Aati Hay Bu Paalish say Uass Ki Zulf e Mushkeen Ki

Hamaari Deed Ko Khaab e ZULAIKHA , Aar e Bistar Hay

Kahun Kaya Dil Ki Haalat Hay Hijr e Yaar Men GHALIB

Keh Betaabi Say Har Ik Taar e Bistar Khaar e Bistar Hay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -