فریاد کی کوئی لے نہیں ہے

فریاد کی کوئی لے نہیں ہے
فریاد کی کوئی لے نہیں ہے

  

فریاد کی کوئی لے نہیں ہے

نالہ پابندِ نے نہیں ہے

کیوں بوتے ہیں باغباں تونبے

گر باغ گدائے مے نہیں ہے

ہرچند ہر ایک شے میں تو ہے

پر تجھ سی  تو کوئی شے نہیں ہے

ہاں کھائیو مت فریبِ ہستی

ہرچند کہیں کہ ہے نہیں ہے

شادی سے گزر کہ غم نہ ہووے

اُردی جو نہ ہو تو دے نہیں ہے

کیوں ردِ قدح کرے ہے زاہد

مے ہے یہ مگس کی قے نہیں ہے

ہستی ہے نہ کچھ عدم ہے غالبؔ

آخر تو کیا ہے اے نہیں ہے

شاعر: مرزا غالب

Faryaad Ki Koi Lay Nahen Hay

Naala Paband e Nay Nahen Hay

Kiun Boltay Hen Baaghbaan Tonbay

Gar Baagh GaDaa e May Nahen Hay

Harchand Har Aik Shaey Men Tu Hay

Par Tujh Si Koi Bhi Shaey Nahen Hay

Haan, Khaaio Mat Fariab e Hasti

Harchand Kahen Keh Hay, Nahen Hay

Shaadi Say Guzar Kar Gham Na Hovay

Urdi Jo Na Ho To Day Nahen Hay

Kiun Rad e Qadaah Karay Hay Zahid

May Hay Yeh , Magas Ki Qay Nahen Hay

Hasti Hay , Na Kuch Adam Hay GHALIB

Aakhir Tu Kaya Hay , Ay Nahen Hay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -سنجیدہ شاعری -