ہم رشک کو اپنے بھی گوارا نہیں کرتے

ہم رشک کو اپنے بھی گوارا نہیں کرتے
ہم رشک کو اپنے بھی گوارا نہیں کرتے

  

ہم رشک کو اپنے بھی گوارا نہیں کرتے

مرتے ہیں، ولے، اُن کی تمنا نہیں کرتے

در پردہ اُنھیں غیر سے ہے ربطِ نہانی

ظاہر کا یہ پردہ ہے کہ پردہ نہیں کرتے

یہ باعثِ نومیدیِ اربابِ ہوس ہے

غالبؔ کو بُرا کہتے ہو، اچھا نہیں کرتے

شاعر: مرزا غالب

Ham Rashk Ko Apnay Bhi Gawaara Nahen Kartay

Martay Hen Walay Un Ki Tamanna  Nahen Kartay

Dar Parda Unhen Ghair Say Hay Rabt e Nahaani

Zaahir Ka Yeh Parda Hay Keh Parda  Nahen Kartay

Yeh Baais e Nomeedi e Arbaab e Hawas Hay

GHALIB Ko Bura Kehtay Ho , Acha Nahen Kartay

Poet: Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -