کیوں نہ ہو چشمِ بُتاں محوِ تغافل ، کیوں نہ ہو؟

کیوں نہ ہو چشمِ بُتاں محوِ تغافل ، کیوں نہ ہو؟
کیوں نہ ہو چشمِ بُتاں محوِ تغافل ، کیوں نہ ہو؟

  

کیوں نہ ہو چشمِ بُتاں محوِ تغافل ، کیوں نہ ہو؟

یعنی اس بیمار کو نظارے سے پرہیز ہے

مرتے مرتے ، دیکھنے کی آرزُو رہ جائے گی

وائے ناکامی ! کہ اُس کافر کا خنجر تیز ہے

عارضِ گُل دیکھ ، رُوئے یار یاد آیا ، اسدؔ!

جوششِ فصلِ بہاری اشتیاق انگیز ہے

شاعر:مرزا غالب

Kiun Na Ho Chashm e Butaan Mehv e Taghaafull Kiun Na Ho

Yaani Iss Bemaar Ko Nazzaaray Say Parhaiz  Hay

Martay Martay Dekhnay Ki Aarzu Reh Jaaey Gi

Waa e Nakaami Keh Uss Kaafir Ka Khanjar Taiz Hay

Aariz e Gull Dekh , Roo e yaar yaad aaya ASAD

Joshash e Fasl Bahaari Ishtayaaq Angaiz Hay

Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -