دیا ہے دل اگر اُس کو ، بشر ہے ، کیا کہیے

دیا ہے دل اگر اُس کو ، بشر ہے ، کیا کہیے
دیا ہے دل اگر اُس کو ، بشر ہے ، کیا کہیے

  

دیا ہے دل اگر اُس کو ، بشر ہے ، کیا کہیے

ہوا رقیب ، تو ہو ، نامہ بر ہے ، کیا کہیے

یہ ضد کہ آج نہ آوے ، اور آئے بِن نہ رہے

قضا سے شکوہ ہمیں کِس قدر ہے ، کیا کہیے!

رہے ہے یوں گِہ و بے گہِ ، کہ کُوئے دوست کو اب

اگر نہ کہیے کہ دشمن کا گھر ہے ، کیا کہیے!

زہے کرشمہ کہ یوں دے رکھا ہے ہم کو فریب

کہ بن کہے ہی انہیں سب خبر ہے، کیا کہیے

سمجھ کے کرتے ہیں ، بازار میں وہ پُرسشِ حال

کہ یہ کہے کہ ، سرِ رہگزر ہے ، کیا کہیے؟

تمہیں نہیں ہے سرِ رشتۂ وفا کا خیال

ہمارے ہاتھ میں کچھ ہے ، مگر ہے کیا؟ کہیے!

اُنہیں سوال پہ زعمِ جنوں ہے ، کیوں لڑیئے

ہمیں جواب سے قطعِ نظر ہے ، کیا کہیے؟

حَسد ، سزائے کمالِ سخن ہے ، کیا کیجے

سِتم ، بہائے متاعِ ہُنر ہے ، کیا کہیے!

کہا ہے کِس نے کہ غالب بُرا نہیں ، لیکن

سوائے اس کے کہ آشفتہ سر ہے ، کیا کہی

شاعر: مرزا غالب

Daya Hay Dil Agar Uss Ko Bashar Hay, Kaya Kahiay

Hua raqeeb To Ho , Nama Bar Hay, Kaya Kahiay

Yeh Zidd Keh Aaaj Na Aaway Aor Aaey Bin Na Rahay

Qaza Say Shikwa hamen Kiss Qadar Hay, Kaya Kahiay

Rahay Hay Yun Geh Ba Geh Keh Koo e Dost Ko Ab

Agar Na Kahiay Keh Dushman ka Ghar Hay, Kaya Kahiay

Zahay Karishma Keh Yun Day Rakha Hay Ham Ko Faraib

Keh Bin Kahay Hi Unhen Sab   Khabar Hay, Kaya Kahiay

Samajh K Kartay Hen Bazaar Men Wo Pursash e Haal

Keh Yeh Kahay Keh Rehguzar Hay, Kaya Kahiay

Tumhen Nahen Hay Sar e Rishta e Wafa Ka Khayaal

Hamaaray Haath Men Kuch Hay  Magar Hay , Kaya Kahiay

unhen Sawaal Pe Zoam e Junun hay kiun larraiay

Hamen Jawaab e Qast e Nazar Hay, Kaya Kahiay

Hasad Sazaa e Kamaal e Sukhan Hay Kaya  Kijiay

Sitam Baha e Mataa e Hunar Hay, Kaya Kahiay

Kaha Hay Kiss Nay Keh GHALIB Bura Nahen Lekin

Siwaay Uss K Keh Aashufta Sar Hay, Kaya Kahiay

Poet:Mirza Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -