دیکھ کر در پردہ گرمِ دامن افشانی مجھے 

دیکھ کر در پردہ گرمِ دامن افشانی مجھے 
دیکھ کر در پردہ گرمِ دامن افشانی مجھے 

  

دیکھ کر در پردہ گرمِ دامن افشانی مجھے 

کر گئی وابستۂ تن میری عریانی مجھے 

بن گیا تیغِ نگاہِ یار کا سنگِ فساں 

مرحبا میں! کیا مبارک ہے گراں جانی مجھے 

کیوں نہ ہو بے التفاتی ، اس کی خاطر جمع ہے 

جانتا ہے محوِ پرسش ہائے پنہانی مجھے 

میرے غم خانے کی قسمت جب رقم ہونے لگی 

لِکھ دیا من جملۂ اسبابِ ویرانی ، مجھے 

بدگماں ہوتا ہے وہ کافر ، نہ ہوتا ، کاشکے! 

اس قدر ذوقِ نوائے مرغِ بستانی مجھے 

وائے ! واں بھی شورِ محشر نے نہ دم لینے دیا 

لے گیا تھا گور میں ذوقِ تن آسانی مجھے 

وعدہ آنے کا وفا کیجے ، یہ کیا انداز ہے ؟ 

تم نے کیوں سونپی ہے میرے گھر کی دربانی مجھے؟ 

ہاں نشاطِ آمدِ فصلِ بہاری ، واہ واہ ! 

پھر ہوا ہے تازہ سودائے غزل خوانی مجھے 

دی مرے بھائی کو حق نے از سرِ نو زندگی 

میرزا یوسف ہے ، غالبؔ ! یوسفِ ثانی مجھ

شاعر:مرزاغالب

Dekh Kar Dar Parda Daaman Afashaani Mujhay

Kar Gai Wabasta e Tan Meri Uryaani Mujhay

Ban Gaya  Taigh  Nigaah e Yar Ka Sang e Fsaan

Marhabaa , Main Kaya Mubarak Hay Giraan Jaani Mujhay

Kiun Na Ho  Be Iltafaati  Uss Ki Khaatir Jamaa Hay

Jaanta Hay Mehv e Pur Sashhaa e Pinhaani Mujhay

Meray Gham Khaanay Ki Qismat Jab Raqam Honay Lagi

Likh Daya Mijumla e Asbaab e Veeraani Mujhay

Bad Gumaan Hota Hay Wo Kaafir Na Hota Kaashkay

Iss Qadar Zoq e Nawaa e Murgh Bastaani Mujhay

Waaey Waan Bhi Shor e Mehshar Nay Na Dam Lenay Daya

Lay Gaya Gor Men Zoq e Tan Asaani Mujhay

Waada Aaanay Ka Wafa Kijiay , Yeh Kaya Andaaz Hay

Tum Nay Kiun Sonpi Hay Meray Ghar Ki Darbaani Mujhay

Haan , Nishat e Aamad e Fasl e Bahaari Wah Wah

Phir Hua Hay Taaza Sodsa e Gahzal Khaani Mujhay

Di Miray Bhai Ko Haq Nay Az Sar e Nao  Zindagi

MEERZA YOSAF Hay Mujhay GHALIB, YOUSAF e Saani Mujhay

Poet: Mirz  Ghalib

مزید :

شاعری -رومانوی شاعری -غمگین شاعری -