’آپ کا شکریہ، لیکن ہمیں نہیں چاہیے‘ بھارتیوں نے کنگنارناوت کو پاکستان جانے کا مشورہ دیا تو آگے سے پاکستانیوں نے بھی جواب دے دیا

’آپ کا شکریہ، لیکن ہمیں نہیں چاہیے‘ بھارتیوں نے کنگنارناوت کو پاکستان جانے ...
’آپ کا شکریہ، لیکن ہمیں نہیں چاہیے‘ بھارتیوں نے کنگنارناوت کو پاکستان جانے کا مشورہ دیا تو آگے سے پاکستانیوں نے بھی جواب دے دیا

  

ممبئی(مانیٹرنگ ڈیسک) بالی ووڈ اداکارہ کنگنا رناوت اپنے بے باک بیانات کی وجہ سے آئے روز بھارتی سوشل میڈیا صارفین کی تنقید کی زد میں رہتی ہیں۔ اب کی بار اداکارہ نے ممبئی شہر کو ’پاکستان کے پاس موجود کشمیر‘ اور ممبئی پولیس اور حکام کو طالبان سے تشبیہ دے کر انتہاءپسند ہندوﺅں کی دم پر پاﺅں رکھ دیا ہے اور وہ حسب دستور کنگنا رناوت کو بھی پاکستان چلے جانے کا کہہ رہے ہیں۔

ان انتہاءپسند ہندوﺅں کی طرف سے کنگنا رناوت کو پاکستان جانے کا کہنے پر پاکستانی صارفین نے کچھ ایسا ردعمل دینا شروع کر دیا ہے کہ سن کر آپ کو ہنسی آ جائے گی۔ ویب سائٹ’پڑھ لو‘ کے مطابق بھارت میں کنگنارناوت کے خلاف شدید احتجاج کیا جا رہا ہے اور سوشل میڈیا پر ’کنگنا پاگل ہے‘ کا ہیش ٹیگ سرفہرست جا رہا ہے۔ بھارتی سوشل میڈیا پر ہندوﺅں کی اکثریت کنگنا کو پاکستان جانے کو کہہ رہی ہے جس کا جواب پاکستانی سوشل میڈیا صارفین ’نو، تھینکس‘ سے دے رہے ہیں۔ گویا یہ پہلی بار ہو رہا ہے کہ کسی بھارتی شخصیت کو بھارتیوں نے ملک سے نکل جانے اور پاکستان چلے جانے کو کہا ہے اور پاکستانیوں کی طرف سے’باالفاظ دیگر’آپ کا شکریہ، ہمیں نہیں چاہیے“ کہا جا رہا ہے۔

کنگنا نے جس طرح ممبئی کو پاکستان کے پاس موجود کشمیر سے تشبیہ دی ہے اس پر پاکستانی بھی خفگی کا اظہار کر رہے ہیں۔ کنگنا نے گزشتہ روز اپنے گھر میں انتہاءپسند ہندوﺅں کی طرف سے کی گئی توڑ پھوڑ کی تصویر پوسٹ کی اور اس ٹویٹ میں لفظ ’پاکستان‘ لکھ دیا۔ گویا کہنا چاہ رہی ہوں کہ ایسا پاکستان میں ہوتا ہے۔

معروف پاکستانی صحافی مہر تارڈ نے کنگنا کی اس ٹویٹ کے جواب میں انہیں کہا ہے کہ ”ڈیئر کنگنا برائے مہربانی اپنی سیاسی یا کسی بھی دوسری جنگ میں ہمارے ملک کا نام ملوث مت کریں۔ پاکستان میں ہم اپنے قومی ہیروز کے گھر اور دفاتر مسمار نہیں کرتے۔ ایک پاکستانی صارف پرنیا خان نے کنگنا کو جواب دیتے ہوئے لکھا ہے کہ ”شہرت پانے اور میڈیا کی نظروں میں رہنے کے لیے کنگنا نے جو رویہ اختیار کر رکھا ہے اب وہ قابو سے باہر ہو رہا ہے۔ کیا تمہارا گھر پاکستان حکام نے تباہ کیا ہے؟ برائے مہربانی پاکستان کو اس میں ملوث نہ کرو۔ ہمارے پاس پریشان ہونے کے لیے اور بڑے معاملات ہیں۔ خوش رہیں۔“

مزید :

تفریح -