کتنے فیصد گورے کسی اور کے بچے کو اپنا سمجھ کر پال رہے ہیں، سائنسدانوں نے مغربی معاشرے کا شرمناک ترین پہلو بے نقاب کردیا، بہت سے گوروں کو شک میں ڈال دیا

کتنے فیصد گورے کسی اور کے بچے کو اپنا سمجھ کر پال رہے ہیں، سائنسدانوں نے ...
کتنے فیصد گورے کسی اور کے بچے کو اپنا سمجھ کر پال رہے ہیں، سائنسدانوں نے مغربی معاشرے کا شرمناک ترین پہلو بے نقاب کردیا، بہت سے گوروں کو شک میں ڈال دیا

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) مغرب میں جنسی بے راہ روی اس حد تک بڑھ چکی ہے کہ اب اکثر لوگ شادی کرنا ضروری ہی نہیں سمجھتے اور اس کے بغیر ہی بچے پیدا کر لیتے ہیں۔ان کے مابین کوئی مضبوط بندھن نہ ہونے کے سبب فریقین میں بے وفائی کی شرح بھی بہت زیادہ پائی جاتی ہے۔ اب برطانیہ کے حوالے سے ایک اپنی طرز کی منفرد تحقیقاتی رپورٹ سامنے آئی ہے جس میں بتایا گیا ہے کہ ”برطانیہ میں ہر 50میں سے ایک باپ نادانستہ طور پر کسی اور کے بچے کی پرورش کر رہا ہے۔“برطانوی اخبار ”دی انڈیپنڈنٹ“ کی رپورٹ کے مطابق یہ تحقیق بیلجیئم کی لیوین یونیورسٹی(Leuven University) کے ماہرین نے کی ہے۔

بچہ پیدا کرنے کے لیے دنیا کی سب سے مہنگی جگہ ...

رپورٹ کے مطابق ماہرین کا کہنا ہے کہ ”ہر 50میں سے ایک عورت اپنے پارٹنر سے بے وفائی کرتے ہوئے کسی اور کے بچے کو جنم دے رہی ہے۔ نادانستہ طور پر اس بے وفا خاتون کا پارٹنر اس بچے کو اپنا حقیقی بچہ سمجھ کر پروان چڑھا رہا ہے حالانکہ وہ اس کی اولاد نہیں ہوتا۔تحقیق کاروں کا قیاس تھا کہ برطانیہ میں 10فیصد باپ اس صورتحال سے دوچار ہوتے ہوں گے لیکن جب یہ شرح صرف 2فیصد سامنے آئی تو ماہرین کا کہنا ہے کہ ہمیں بہت حیرت ہوئی۔ تحقیق کار مارٹین لارموسیو(Maarten Larmuseau) کا کہنا تھا کہ ”میڈیا اور سائنسی مصنف اکثر دعویٰ کرتے ہیں کہ اکثر مردوں کو ان کی پارٹنر خواتین بے وقوف بنا رہی ہیں۔ ہماری تحقیق کے مطابق یہ شرح 1سے 2فیصد تک ہے۔ “یہ تحقیقاتی رپورٹ میگزین ”ٹرینڈز ان ایکالوجی اینڈ ایوولوشن“(Trends in Ecology and Evolution) میں شائع ہوئی۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -