زرمبالہ ذخائر میں کمی تشویشناک، ڈالر کی اونچی اڑان سے مہنگائی میں اضافہ، بزنس کمیونٹی

زرمبالہ ذخائر میں کمی تشویشناک، ڈالر کی اونچی اڑان سے مہنگائی میں اضافہ، ...

  

         ملتان(نیوز رپورٹر)ایوان تجارت وصنعت ملتان کے صدر خواجہ محمد حسین, سابق سینئر نائب صدر میاں راشد اقبال، سینئر عہدیدار خواجہ عثمان، ممتاز تاجر رہنما خواجہ سلیمان صدیقی، محمد اختر بٹ، ظفر اقبال صدیقی، فیصل سعید، جعفر علی شاہ اور احتشام الحق نے کہا ہے کہ ڈالر کی اونچی اڑان ملک میں مہنگائی کی بنیادی وجہ ہے ملک میں ایکسپورٹ کے مقابلے میں امپورٹ کی جانیوالی اشیا سمیت بہت سی داخلی پراڈکٹ(بقیہ نمبر42صفحہ6پر)

 کے لیئے بھی خام مال امپورٹ کیا جاتا ہے ڈالر کا ریٹ بڑھنے سے کاسٹ اف 7 بھی بڑھ جاتی ہے جس کا بوجھ براہ راست صارفین کو برداشت کرنا پڑتا ہے ان خیالات کا اظہار انہوں نے پاکستان سروے میں گفتگو کرتے ہوئے کیا، خواجہ محمد حسین اور میاں راشد اقبال نے کہا کہ ڈالر کا ریٹ اور پٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں بڑھنے سے مہنگائی کا بڑھنا ایک فطری بات ہے اوپر سے سٹیٹ بینک نے انٹرسٹ ریٹ بڑھا کر بزنس کمیونٹی کو دہرے مخمصے میں ڈال دیا ہے سٹیٹ بینک کو اس پر نظرثانی کرنی چاہیئے انہوں نے مزید کہا کہ حکومت بینک میں سرمایہ رکھ کے انٹرسٹ لینے کی بجائے اپنا سرمایہ کاربار میں لگائے تاکہ کاروباری سرگرمیاں وسعت پائیں اور روزگار کے بھی مزید مواقع پیدا ہوں خواجہ عثمان، فیصل سعید، خواجہ سلیمان صدیقی اور محمد اختر بٹ نے کہا کہ ڈالر ہی بنیاد پر سارے کاروبار کا انحصار ہے 80 فیصد اشیائے ضروریہ امپورٹ کی جارہی ہیں اس کے علاوہ مقامی پراڈکٹس کا خام مال بیرون ممالک سے امپورٹ کیا جاتا ہے ڈالر کا ریٹ بڑھنے سے قیمتوں کا بڑھنا فطری سی بات ہے علاوہ ازیں کچھ لوگ ڈالر سٹاک کرکے بھی اس عمل میں حصہ دار بنے ہوئے ہیں انہیں چاہیئے کہ وہ سٹاک کیئے ہوئے ڈالرز کو مارکیٹ میں لائیں تاکہ ڈالر میں استحکام آئے انہوں نے مزید کہا کہ اس وقت ملک میں زرمبادلہ کے زخائر بھی تشویشناک حد تک کمی سے دوچار ہیں حکومت قبل از وقت بہتر منصوبہ بندی سے موثر اقدامات اٹھائے تاکہ معاشی بحران کا سامنا نہ ہو ظفر اقبال صدیقی، جعفر علی شاہ اور احتشام الحق نے کہا کہ ڈالر کا ریٹ بڑھنے سے صرف امپورٹڈ سامان کی قیمتیں نہیں بڑھتی بلکہ ان اشیا کے نرخ بھی آسمان سے باتیں کرنے لگتے ہیں جس کا خام مال بیرون ملک سے امپورٹ کیا جاتا ہے انہوں نے مزید کہا کہ حکومت ڈالر کی اڑان کو کنٹرول کرنے کیلئے موثر اقدامات اٹھائے تاکہ کاروباری سرگرمیاں بحال ہوں کاروبار رواں ہونے سے عوام کو روزگار ملنا شروع ہو جائے گا جبکہ نجی سرمایہ کاری، تاجروں اور صنعتکاروں کا اعتماد مزید بہتر کرنے کی ضرورت ہے۔ معیشت کے تمام شعبوں میں مسابقت پیدا کی جائے، پیداواری شعبہ کو بحال کیا جائے اور برآمدات کو خصوصی توجہ دی جائے جس کے بغیر کشکول توڑنا ناممکن ہے۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -