اس پرچم کے سائے تلے ہم ایک ہیں

اس پرچم کے سائے تلے ہم ایک ہیں
اس پرچم کے سائے تلے ہم ایک ہیں

  

وطن عزیز پاکستان کا قیام 14اگست کو ہوا تھا، ہر سال پاکستانی قوم اس دن کو جوش و جذبے کے ساتھ مناتی ہے ،گھر گھر ،ہر گلی محلے میں پاکستانی پرچم لہرائے جاتے ہیں اور پاکستان کے ساتھ محبت کا ثبوت دیا جاتا ہے ،امسال پاکستان میں اگست کے مہینے میں سیاسی افرا تفری ہے ،تحریک انصاف اور عوامی تحریک کے انقلاب اور سونامی کی وجہ سے حکومت پاکستان نے ماہ اگست کو ماہ آزادی کے نام سے منانے کا اعلان کیا ہے،ہر شہر میں روزانہ کی بنیاد پر آزادی کے حوالے سے پروگراموں کا انعقاد کیا جا رہا ہے، صوبائی دارالحکومت لاہور سمیت پنجاب کے تمام شہروں میں سرکاری دفاتر،عوامی مقامات، لاری اڈوں،سکولوں،ہسپتالوں پر پاکستانی پرچم لہرارہے ہیں۔حکومت کا ماہ اگست کو ماہ آزادی کے طور پر منانا خوش آئند ہے،ملک بھر میں یوم آزادی کے حوالے سے تقریبات کا آغاز ہو گیا ہے، جو یکم اگست سے شروع ہو کر 31اگست تک جاری رہیں گی۔ تقریبات کا باقاعدہ آغاز نماز جمعہ کے خطبات میں ملکی سلامتی اور خوشحالی کی دعاو¿ں سے ہو۔ا 13 اور 14 اگست کی درمیانی شب اسلام آباد میں پریڈ اور فلائی پاسٹ ہو گا، جس کے لئے انتظامات کو حتمی شکل دی جا رہی ہے۔

 یوم آزادی کی مرکزی اور روایتی تقریب میں تمام سیاسی جماعتوں کے قائدین کو مدعو کیا جائے گا۔ آزادی ٹرین چلائی جائے گی جو 11اگست کو پشاور سے روانہ ہو کر 11 ستمبر کو کراچی پہنچے گی۔ آزادی کی تقریبات کے تحت قومی پرچم لہرانے کی تقریب کا دائرہ کار پورے ملک میں پھیلایا جائے گا اور تقریبات آزادی کا اہم جزو شہداءکے پاکستان کے مزارات پر حاضری ہو گا۔ ملک بھر میں آزادی واک کا اہتمام بھی کیا جائے گا اور آزادی کی تقریبات کے حوالے سے کھیلوں کے خصوصی مقابلے منعقد کئے جائیں گے۔ زندہ دلان لاہور نے مزار اقبال کے احاطے اور بادشاہی مسجد کے سائے تلے ایک خوبصورت اور رنگا رنگ تقریب کا اہتمام کیا گیا تقریب کو صبح 9 بجے شروع ہونا تھا، مگر اس میں شرکت کے لئے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے افراد صبح 7بجے ہی پہنچنا شروع ہو گئے، یوم آزادی کی تقریب اپنے جوبن پر تھی، طالب علم ملی نغموں سے دلوں کو گرما رہے تھے کہ بارش نے آ لیا، تاہم موسلادھار بارش بھی عوام کے جوش و جذبے کو ٹھنڈا نہ کر سکی اور وہ اِسی جذبے سے ملی نغمے پیش کرتے رہے۔ اس موقع پر فضا اس پرچم کے سائے تلے ہم ایک ہیں اور اس طرح کے دوسرے ملی نغموں سے گونجتی رہی۔ تقریب میں وفاقی وزیر خواجہ سعد رفیق رکن قومی اسمبلی پرویز ملک اور صوبائی اسمبلی کے ارکان سمیت اہم شخصیات نے شرکت کی۔

 عوامی نمائندوں نے مفکر پاکستان علامہ اقبال ؒ کے مزار پر حاضری دی اور پھولوں کی چادر چڑھائی۔انہوں نے شاعر مشرق کی روح کے ایصال ثواب کے لئے فاتحہ خوانی بھی کی۔ شدید بارش کے باوجود یوم آزادی کی تقریب 3گھنٹے سے زائد وقت تک جاری رہی۔ سبز ہلالی پرچم اٹھائے ہونٹوں پر تبسم سجائے تقریب کے شرکاءنغمے سناتے رہے۔ لاہور میں گھروں اور عمارتوں کی چھتوں پر قومی پرچم لہراتے جا رہے ہیں، ہر کوئی ارض پاک پر واری جا رہا ہے، وطن عزیز کے ساتھ چاہتوں کے اظہار کا یہ سلسلہ 31اگست تک جاری رہے گا۔وفاقی وزیر ریلوے خواجہ سعد رفیق نے کہا ہے کہ پاکستان اس وقت مشکل صورت حال سے گزر رہا ہے دھرنے دے کر اس کے لئے مزید مشکلات پیدا نہ کی جائیں۔ قوم کی تقدیر کے فیصلے چوراہوں پر نہیں ہوتے اس کا جمہوری طریقہ ہے مسلح افواج ملکی بقاءکی جنگ لڑ رہی ہیں۔ یہ وقت آپس میں لڑنے، جھگڑنے اور دھرنے دینے کا نہیں، متحد ہونے کا ہے، عمران خان کو کوئی اعتراض ہے، تو وہ بات چیت کے ذریعے ختم کریں، ہم بات چیت کے لئے ہروقت تیار ہیں۔

 عمران خان طالبان سے مذاکرات کے لئے تیار ہیں تو ہم سے کیوں نہیں، کیا ہم طالبان سے بھی گئے گزرے ہیں، ہم معاملات سڑکوں کی بجائے بات چیت کے ذریعے حل کرنا چاہتے ہیں اور اس معاملے کو سلجھانے کے لئے دیگر سیاست دانوں کو بھی شامل کریں گے۔ ہمارے بات چیت کے اس جذبے کو ڈیل نہ سمجھا جائے ۔انقلاب اور آزادی مارچ کے پیش نظر اسلام آباد کو مکمل طور پر سیل کر دیا گیا ہے۔ فیض آباد سمیت دارالحکومت کے تمام داخلی و خارجی راستوں پر پولیس اور رینجرز کی بھاری نفری تعینات کر دی گئی ہے۔

مارچ اور یوم آزادی کی تقریبات کے پیش نظر اسلام آباد میں سیکیورٹی انتظامات کو یقینی بنانے کے وفاقی پولیس کے 10 ہزار، آزاد کشمیر کے ایک اور پنجاب پولیس کے چار ہزار اہلکاروں سمیت مجموعی طور پر 15ہزار سے زائد سیکیورٹی اہلکار اسلام آباد بھر کی سیکیورٹی پر مامور ہوں گے،جنہیں جدید امریکی کٹس، اسلحہ، ربڑ کی گولیاں، آنسو گیس کے شیل، ہلمٹ، ڈنڈے و دیگر ساز و سامان سے لیس کر دیا گیا ہے۔ دہشت گردی کے خدشے کے پیش نظر گیسٹ ہاﺅسوں اور ہوٹلوں کی نگرانی کی جا رہی ہے۔ اسلام آباد کا ریڈ زون اور ڈپلومیٹک انکلیو سیل کر دیا گیا ہے۔ ریڈ زون میں سیکیورٹی کی ذمہ داریاں فوج کے سپرد کر دی گئی ہیں۔ پارلیمنٹ ہاﺅس کی سیکیورٹی کی نگرانی خصوصی کنٹرول روم سے کی جا رہی ہے۔ شہر کے داخلی و خارجی راستوں کو سیل کرنے کے لئے ابتدائی طور پر 900 کنٹینرز حاصل کئے گئے تھے، مگر ہفتہ کو پنجاب میں حالات خراب ہونے کے باعث مزید کنٹینر بھی حاصل کئے گئے ہیں ،جو اسلام آباد کے تمام داخلی و خارجی راستوں پر نصب کر کے شہر کو ہر طرح سے مکمل طور پر سیل کیا جائے گا۔

 وزارت داخلہ نے کسی بھی ہنگامی صورت حال سے نمٹنے کے لئے امریکہ کی تیار کردہ جدید خصوصی سیکیورٹی پروکٹ وفاقی پولیس کے حوالے کر دی، جدید خصوصی کٹ میں ڈنڈا پروف جیکٹ، ہیلمٹ، شوز اور پتھر روکنے کے لئے خصوصی شیشہ شامل ہے، سیکیورٹی پروکٹ سے لیس سینکڑوں پولیس اہلکاروں کو وفاقی دارالحکومت کے مختلف مقامات پر تعینات کر دیاگیا۔ 14 اگست کو آزادی پریڈ کے انتظامات کے لئے پارلیمنٹ ہاو¿س میں فوجی کنٹرول روم قائم کر دیا گیا ہے۔ سیکیورٹی سمیت تمام امور کی نگرانی فوج اور خفیہ اداروں کے سپرد کی گئی ہے۔ وفاقی وزیر اطلاعات پرویز رشید نے کہا ہے کہ میڈیا عوامی سطح پر یوم آزادی کی تقریبات کو مکمل قومی جذ بے سے منانے کے لئے اپنا کر دار ادا کرے۔ اخبارات کے مدیران کے نام لکھے گئے خط میں انہوں نے کہا کہ حکومت نے رواں سال یوم آزادی کی تقریبات کو حکومتی سطح پر منانے کا فیصلہ کیا ہے، جس کی تیاریاں مکمل کرلی گئی ہیں۔

حکومت میڈیا کے ذریعے ملک دشمن عنا صر کو متنبہ کرنا چا ہتی ہے کہ پوری قوم ملک کو امن کا گہوارہ اور ترقی پر گامزن دیکھنا چاہتی ہے اور دنیا کو محفوظ بنانے کے لئے اپنا کر دار داد کر نے کے لئے تیار ہے، تاہم اس ضمن میں عوام کو متحرک کرنے کے لئے میڈیا کو اپنا مثبت کردار ادا کرنا ہو گا۔ حکومت یوم آزادی کی تقریبات کو قومی سطح پر منا کر ملک دشمن عناصر کو یہ پیغام دینا چا ہتی ہے کہ پوری قوم قومی پر چم کے سائے کے تلے میں ایک ہے۔ انہوںنے کہا کہ امسال یوم آزادی کی تقریبات منفرد حیثیت رکھتی ہیں، کیونکہ ایک طرف تو موجودہ حکومت معاشی ترقی کے میدان میں جہاں نمایاں کامیابیاں حاصل کر رہی ہے، وہاں ہماری مسلح افواج شمالی وزیرستان میں دہشت گردوں کے خلاف فیصلہ کن جنگ میں مصروف ہیں۔ اس موقع پر جہاں پاک فوج کو قوم کی مکمل حمایت کی ضرورت ہے، وہاں پاکستان کے عوام کے لئے یہ بہترین موقع بھی ہے کہ وہ ان مقاصد کے حصول کو یقینی بنائیں، جنہوں نے اس ملک کی تخلیق میں اہم کردار ادا کیا تھا۔

مزید : کالم