پاکستانی ہیلی کاپٹر کا عملہ ہمارے پاس نہیں ، تحریک طالبان پاکستان

پاکستانی ہیلی کاپٹر کا عملہ ہمارے پاس نہیں ، تحریک طالبان پاکستان
پاکستانی ہیلی کاپٹر کا عملہ ہمارے پاس نہیں ، تحریک طالبان پاکستان

  

کابل (ویب ڈیسک) کالعدم تحریک طالبان پاکستان نے کہا ہے کہ افغانستان میں گرنے والے پاکستانی ہیلی کاپٹر کا عملہ ان کے پاس نہیں ہے ، این این آئی کے مطابق ترجمان محمد خراسانی نے ایک بیان میں کہا کہ میڈیا میں چلنے والی یہ خبریں کو لوگر میں گرنے والے ہیلی کاپٹر کا عملہ ٹی ٹی پی کے کمانڈر آدم خان کو چے کے قبضے میں ہے بالکل بے بنیاد ہیں، ہم کوچے سے رابطے میں ہیں اور انہوں نے اس واقعہ سے مکمل لاعلمی کا اظہار کیا ہے .

خراسانی نے کہا کہ طالبان میں محسود اللہ نام کا کوئی گروپ ہے اور نہ قاری سیف اللہ کے نام سے ٹی ٹی پی کا کوئی ترجمان موجود ہے، یاد رہے کہ قاری سیف اللہ کے نام سے ایک شخص نے دعویٰ کیا تھا کہ لوگر میں گرنے والے پاکستانی ہیلی کاپٹر کا عملہ ان کے قبضے میں ہے.

کابل سے آئی این پی کے مطابق افغان سول ایوی ایشن اتھارٹی نے تصدیق کی ہے کہ صوبہ لوگر میں ہنگامی لینڈنگ کرنے والے پاکستانی ہیلی کاپٹر کو افغان فضائی حدود استعمال کرنے کی اجازت دی گئی تھی۔ افغان میڈیا کے مطابق اے سی اے اے کے ترجمان قاسم رحیمی نے بتایا ہے کہ اس سلسلے میں خارجہ امور کی وزارت کو پاکستان سے ایک خط بھیجا گیا تھا۔ افغان سول ایوی ایشن اتھارٹی نے ایک نوٹیفکیشن جاری کیا تھا کہ 72 گھنٹوں کے اندر اندر پاکستانی ایم آئی 17 ہیلی کاپٹر مخصوص وضاحت کے تحت افغانستان کی فضائی حدود استعمال کرے گا۔

وزارت دفاع کے نائب ترجمان محمد رضمانش کا کہنا ہے کہ تحقیقات جاری ہیں کہ یہ وہی ہیلی کاپٹر تھا یا کوئی دوسرا تھا، اصل حقیقت سے میڈیا کو آگاہ کریں گے،ادھر میڈیا رپورٹس کے مطابق پاکستانی حکام اپنے عملے کے معاملے کو جلد بازی یا فوجی آپریشن سے حل نہیں کرنا چاہتے ، عملے کی بحفاظت واپسی کیلئے پاکستانی حکام طالبان سے رابطہ رکھنے والے علما کے توسط سے اپنا پیغام بھیج رہے ہیں۔

مزید :

بین الاقوامی -