تنزلی کا شکار اڑھائی ہزار پولیس اہلکاروں کا ریٹائرمنٹ لینے کا فیصلہ

تنزلی کا شکار اڑھائی ہزار پولیس اہلکاروں کا ریٹائرمنٹ لینے کا فیصلہ
تنزلی کا شکار اڑھائی ہزار پولیس اہلکاروں کا ریٹائرمنٹ لینے کا فیصلہ

  

لاہور (ویب ڈیسک) محکمہ پولیس میں آﺅٹ آف ٹرن پروموشن کی زد میں آکر عہدوں میں تنزلیاں ہونے کے بعد اڑھائی ہزار سے زائد اہلکاروں نے محکمہ پولیس سے ریٹائرمنٹ لینے کا فیصلہ کرتے ہوئے آئی جی پنجاب کو درخواستیں جمع کروادی ہیں۔ محکمہ کی جانب سے بقایا جات کی وصولیوں کا علم ہونے پر ملازمین پریشان ہوگئے۔دریں اثناءسپریم کورٹ نے محکمہ پولیس میں کسی بھی عہدے پر شولڈر پروموشن دے کر اگلے عہدے پر تعیناتی کرنے کو بھی روک دیا تھا مگر پنجاب پولیس میں متعدد افسران کو آن پے سکیل پر اہم اور پرکشش سیٹوں پر تعینات کیا گیا ہے ان کو بھی عہدوں سے ہٹانے کے بارے میں غور شروع کردیا گیا ہے۔

اخبار روزنامہ خبریں کے مطابق سپریم کورٹ کی جانب سے آﺅٹ آف ٹرین پروموشنز (انعامیہ ترقیاں) فوری طور پر واپس لینے کا حکم ملنے کے بعد آئی جی پنجاب مشتاق احمد سکھیرا نے اس پر عملدرآمد کرواتے ہوئے صوبے بھر میں ڈی آئی جی سے ہیڈ کانسٹیبل رینک کے 8 ہزار سے زائد افسران کی انعامیہ ترقیاں واپس لے کر ان کو واپس کردیا۔ نئے عہدوں کے مطابق متعدد ایس پیز، ڈی ایس پیز، انسپکٹرز اور سب انسپکٹرز اس سے متاثر ہوئے ہیں۔ درجنوں انسپکٹر اور سب انسپکٹرز کانسٹیبل بن گئے ہیں۔ ایسے متاثرہ ہونے والے اڑھائی ہزار سے زائد اہلکاروں نے فوری طور پر محکمہ پولیس سے ریٹائرمنٹ لینے کا فیصلہ کرتے ہوئے آئی جی پنجاب کو درخواستیں جمع کروادی ہیں، ایسے متاثرہ اہلکاروں کو سنٹرل پولیس آفس کی جانب سے مطلع کیا گیا ہے کہ ان کو ریٹائرمنٹ موجودہ تاریخ سے نہیں بلکہ 01-01-2017سے ملے گی اور ان کو وہ تمام واجبات ادا کرنے ہوں گے جو ان کو انعامیہ ترقیوں کے دوران ملے ہیں، اضافی تنخواہیں اور دیگر الاﺅنسز بھی واپس محکمہ پولیس کو جمع کروانے ہوں گے، بصورت دیگر ان کے پراویڈنٹ فنڈ اور جی پی فنڈ (گریجویٹی) سے کٹوتی کئے جائیںگے۔

ان متاثرہ اہلکاروں نے موقف اختیار کیا تھا کہ ان کو جس عہدے پر وہ پہلے کام کررہے تھے اسی عہدے پر بقایا جات کے ساتھ ریٹائرمنٹ دی جائے اور بقایا جات وصول نہ کئے جائیں۔ ان متاثرہ اہلکاروں نے موقف اختیار کیا تھا کہ ان کو جس عہدے پر وہ پہلے کام کررہے تھے اسی عہدے پر بقایا جات کے ساتھ ریٹائرمنٹ دی جائے اور بقایا جات وصول نہ کئے جائیں۔ ان اہلکاروں کو ریٹائرمنٹ پر 9 سے 10 لاکھ روپے کے قریب بقایا جات ملنے تھے اگر ان کی بقایا جات کی کٹوتی ہوئی تو ان کو بہت ہی کم پیسے ملیں گے۔ متاثرہ اہلکاروں کی ریٹائرمنٹ کی درخواستیں ملنے کے بعد آئی جی آفس میں ان اہلکاروں کے بقایا جات کی ادائیگی کے لئے بلوں کی تیاری کا عمل شروع ہوگیا ہے۔

مزید :

لاہور -