ای سگریٹ، پہلے شوق پھر عادت

ای سگریٹ، پہلے شوق پھر عادت

  

نیویارک (اے پی پی) ایک تازہ جائزے سے پتہ چلا ہے کہ نوجوان افراد پہلے پہل تو الیکٹرانک سگریٹ کا آغاز ، ان کے نت نئے ڈیزائنوں اور ذائقوں کے تجسس میں کرتے ہیں لیکن پھر ان کی سستی قیمت کی وجہ سے ان کے شیدائی ہو جاتے ہیں۔بچوں سے متعلق ایک طبی جریدے میں شائع ہونے والی ایک رپورٹ کے مطابق ایسی وجوہات کا پتہ لگایا گیا ہے، جو نوجوانوں میں ای سگریٹوں کے مستقل استعمال کا باعث بنتی ہیں۔ کاٹن کینڈی سے لے کر پیزا تک کے ذائقوں میں دستیاب یہ برقی سگریٹ بنیادی طور پر بیٹری سے چلنے والی ایک ڈیوائس ہے، جو نکوٹین سے بھرے مائعات کو گرم کر دیتی ہے، جس سے دھواں بنتا ہے۔ییل سکول آف میڈیسن کے پروفیسروں کی تحقیق یہ بتاتی ہے کہ الیکٹرانک سگریٹوں کی نوجوان افراد میں مقبولیت کی بنیادی وجوہات میں ایک تو سلگا کر پینے والی عام سگریٹ کے مقابلے میں ان کی قیمت کا ارزاں ہونا ہے۔

\ اور دوسرے یہ کہ ان سے ایسے عوامی مقامات پر بھی لطف اندوز ہوا جا سکتا ہے جہاں عام سگریٹ نوشی ممنوع ہوتی ہے۔یوں تو برقی سگریٹ کی قیمتیں، برانڈ اور ریاست کی طرف سے سگریٹ پر عائد ٹیکسز کے لحاظ سے بڑے پیمانے پر مختلف ہو سکتی ہیں تاہم سگریٹ سازی کی صنعت کے کئی اندازوں کے مطابق اوسط درجے کا ایک سگریٹ نوش ایک سال میں کئی ہزار ڈالر کی بچت کر سکتا ہے۔

مزید :

عالمی منظر -