ہائی کورٹ نے قومی پرچم پر وزیراعظم اور دیگر شخصیات کی تصاویر چھاپنے سے روکنے کے لئے پالیسی وضع کرنے کا حکم دے دیا

ہائی کورٹ نے قومی پرچم پر وزیراعظم اور دیگر شخصیات کی تصاویر چھاپنے سے روکنے ...
ہائی کورٹ نے قومی پرچم پر وزیراعظم اور دیگر شخصیات کی تصاویر چھاپنے سے روکنے کے لئے پالیسی وضع کرنے کا حکم دے دیا

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی) لاہور ہائیکورٹ نے قومی پرچم کی حرمت کو برقرار رکھنے کے لئے وفاقی حکومت کو 3ماہ میں پالیسی وضع کرنے کا حکم جاری کردیا۔مسٹرجسٹس شاہد بلال حسن نے اس سلسلے میں دائر طلحہ سیف ایڈووکیٹ کی درخواست پر مزید ہدایت کی ہے کہ قومی پرچم پروزیراعظم سمیت مختلف سیاسی شخصیات کی تصاویر چھاپنے اور مختلف رنگوں کے قومی پرچموں کی فروخت روکنے کے لئے بھی قانون پر عمل درآمد یقینی بنایا جائے۔فاضل جج نے کیس کی سماعت کے دوران ریمارکس دیئے کہ اس مرتبہ جیسے تیسے یوم آزادی گزر جانے دیں، آئندہ اس مسئلے کو سنجیدہ طور پر لیں گے۔درخواست گزار کی طرف سے عمران خان ایڈووکیٹ نے موقف اختیار کیا کہ لاہور سمیت ملک بھر میں وزیر اعظم نواز شریف، عمران خان سمیت مختلف شخصیات کی تصاویر والے قومی پرچم فروخت کئے جا رہے ہیں جو قومی پرچم کا تقدس پامال کرنے کے مترادف ہے،وفاقی حکومت نے 2002 میں نیشنل فلیگ رولز وضع کئے تھے جن پر آج تک عملدرآمد نہیں ہوا اور نہ ہی ان رولز سے عوام کو آگاہ کرنے کے لئے کوئی تشہیر کی گئی ہے، حکومت کی غفلت سے اب سبز رنگ کے ساتھ ساتھ رنگ برنگی جھنڈیاں بھی فروخت ہورہی ہیں،عدالت سے استدعا کی گئی کہ تصاویر والے جھنڈوں اور رنگ برنگی جھنڈیوں کی فروخت کے خلاف کریک ڈاﺅن کا حکم دیا جائے، عدالت نے دوران سماعت ریمارکس دیئے کہ اس وقت کوئی حکم جاری کیا گیا تو اس پر عمل درآمد کرنا حکومت کے لئے ممکن نہیں ہو گا، اس مرتبہ یوم آزادی کو جیسے تیسے گزر جانے دیں، آئندہ اس مسئلے کو سنجیدہ طور پر دیکھیں گے، عدالت نے درخواست کوعرضداشت میں تبدیل کرتے ہوئے اسے وفاقی سیکرٹری داخلہ کو بھجوادیااورہدایت کی کہ اس درخواست پر قانون کے مطابق کارروائی کی جائے،عدالت نے مزید ہدایت کی ہے کہ قومی پرچم کے تقدس کو یقینی بنانے کے لئے پالیسی وضع کی جائے۔

مزید :

لاہور -