انتظامات، زیرو آڑھتیوں ، بیوپاریوں نے افسروں جکو گھیر لیا

انتظامات، زیرو آڑھتیوں ، بیوپاریوں نے افسروں جکو گھیر لیا

ملتان (سپیشل رپورٹر)سرکاری مویشی منڈی میں بھتہ خوروں کے ستائے بیوپاریوں نے ملتان کیٹل مارکیٹ مینجمنٹ کمپنی کے افسروں کو آڑے ہاتھوں لیا اور ناقص انتظامات پر سوالات (بقیہ نمبر18صفحہ12پر )

کی بوچھاڑ کردی۔ دفاتر میں بیٹھ کر حکام کو سب اچھا ہے کی رپورٹیں بھجوانے والے افسروں نے موقع پر پریشان کن صورتحال دیکھی تو وہاں سے نکلنے میں اپنی عافیت جانی۔ ملتان کیٹل مارکیٹ مینجمنٹ کے ایم ڈی ڈاکٹر حماد اور چیف فنانشل آفیسر (سی ایف او) رانا شہزاد جب گزشتہ دوپہر سامورانا منڈی پہنچے تو سکندرآباد اور مندوخیل سے آنے والے چھ بیوپاری بھتہ خوروں سے تکرار کررہے تھے۔ بیوپاریوں عارف‘ خدا بخش‘ نواز‘ علی حسن‘ ریاض اور محمد اکرم نے سرکاری سرپرستی میں بھتہ وصول کرنے والوں کو بھتہ دینے سے انکار کردیا۔ اسی دوران بیوپاری اور بھتہ خور دست و گریبان بھی ہوئے۔ دو بیوپاریوں کے اس دوران کپڑے بھی پھٹ گئے۔ اس واقعہ کے تھوڑی ہی دیر بعد ایم ڈی ڈاکٹر حماد اور سی ایف او رانا شہزاد کے پہنچنے پر ملتان کیٹل مارکیٹ مینجمنٹ کمپنی کے اٹینڈنس اور دوسرا عملہ دوڑا چلا آیا اور بیوپاریوں نے افسروں کو دیکھ کر پانی اور سایہ کی عدم دستیابی پر آڑے ہاتھوں لیا۔ بیوپاریوں نے منڈی انتظامیہ کے خلاف نعرے بازی بھی کی۔ نعرے بازی کے دوران عملے نے ڈاکٹر حماد اور رانا شہزاد کو اپنے حصار میں لے کر باہر نکالا۔ دونوں افسر منڈی کی حدود سے باہر نکل گئے۔ منڈی میں سایہ‘ پانی کی انتہائی ناقص صورتحال بنائی گئی ہے‘ مویشی پالوں اور بیوپاریوں کے مطابق رات کو لائٹس کا انتظام بھی نہ ہونے کے برابر ہے۔ دوسری طرف سرکاری طورپر دعویٰ کیا گیا ہے کہ سامورانا مویشی منڈی اور بلیل میں آنے والے بیوپاریوں‘ خریداروں اور مویشی پالوں کی سہولت کیلئے ایک درجن سے زائد کولر رکھے جائیں گے۔

ناقص انتظامات

مزید : ملتان صفحہ آخر