الیکشن کے دوران ٹیکنیکل اانداز میں دھاندلی کی گئی، گورنر پنجاب

الیکشن کے دوران ٹیکنیکل اانداز میں دھاندلی کی گئی، گورنر پنجاب

ملتان(سپیشل رپورٹر ) گورنر پنجاب ملک محمد رفیق رجوانہ نے کہا ہے کہ انتقال اقتدار کا مرحلہ خوش اسلوبی اور قوائد کے مطابق طے کریں گے یہ پہلا موقع ہے کہ حکومت کے قیام سے قبل ہی ملک بھر میں اپوزیشن متحد ہو گئی ہے میری دعا ہے کہ ادارے مضبوط ہوں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے فارما ڈسٹری بیوٹرز ایسوسی ایشن کے صدر و سماجی رہنما اظہر بلوچ سے گورنر ہاؤس لاہور میں بات چیت کے (بقیہ نمبر30صفحہ12پر )

دوران کیا گورنر پنجاب نے مزید کہا کہ ان کی ہمیشہ یہ کوشش رہی ہے کہ ملتان سمیت جنوبی پنجاب کے عوام کے مسائل حل ہوں جن میں صحت، تعلیم، پینے کا صاف پانی سمیت دیگر عوامی مسائل کے حل کو اولیت دی گئی اور میں توقع رکھتاہوں کہ آنے والی حکومت عوام کے مسائل کے حل کی طرف پوری توجہ دے گی انہوں نے کہا کہ جس طرح ملک بھر میں دھاندلی کے الزامات لگائے جارہے ہیں اسی طرح میرے بیٹے ملک آصف رفیق رجوانہ کے ساتھ بھی ٹیکنیکل اندازمیں دھاندلی کی گئی پولنگ اسٹیشنوں پر جو عملہ تعینات کیا گیا انہوں نے میری بہو کو مجبور کیا کہ وہ ایک مخصوص نشان پر مہر لگائیں جب ان کو پتہ چلا کہ وہ ایک امیدوار کی اہلیہ ہیں تو پھر میری بہو کو ووٹ ڈالنے دیا گیا یہی سلوک پولنگ اسٹیشنوں پرآنے والی دیگر خواتین کے ساتھ بھی کیا گیا اور پولنگ کے عملے نے اپنی پسند کے امیدوار پر نشانات لگوائے جو اس بات کا ثبوت ہے کہ 2018کا الیکشن صاف اور شفاف نہیں تھا بلکہ ایک خاص جماعت کو جتوانے کے لئے تھا گورنر پنجاب نے کہا کہ ماضی میں ملتان میں جنوبی پنجاب کا سب سول سیکریٹریٹ قائم کرنے کے سلسلے میں تمام تر اقدامات مکمل کر لئے گئے تھے آنے والی حکومت کو چاہیئے کہ وہ جنوبی پنجاب صوبے کے قیام کا وعدہ پورا کرے ۔

رفیق رجوانہ

مزید : ملتان صفحہ آخر