ٹبہ سلطان پور، ہسپتال میں مبینہ کرپشن، معاملہ دبانے کی تیاریاں مکمل

   ٹبہ سلطان پور، ہسپتال میں مبینہ کرپشن، معاملہ دبانے کی تیاریاں مکمل

  

   ٹبہ سلطان پور(نمائندہ پاکستان) ہسپتال ٹبہ سلطان پور میں مبینہ طور پر بوگس بل بنا کر قومی خزانہ سے ایک کروڑ20لاکھ روپے نکلوانے کے معاملہ میں کوئی پیش رفت نہ ہوسکی محکمہ صحت ضلعی وہاڑی کے آفسران خود انکوائری سے بچنے کے لئے معاملہ دبانے کے لئے سرگرم ہوگئے ہیں اورسیاست دانوں کی حمایت حاصل کرتے ہوئے ختم کروانے کی کوششوں میں مصروف ہو(بقیہ نمبر13صفحہ6پر)

چکے ہیں دوسری جانب تحقیقاتی کمیٹی کے چیئر مین اپنی ترقی کروانے کی تیاریاں بھی شروع کرتے ہوئے تحقیقاتی کمیٹی کے چیئر مین ڈاکٹر خالد محمود اور سنیئر ممبرڈپٹی ڈی ایچ او تحصیل میلسی راؤخلیل اپنے خلاف خبریں شائع ہونے پر میڈیا سے ناراض مزید کسی بھی قسم کاموقف دینے سے  صاف انکار کردیاتحقیقاتی کمیٹی کی جانب سے ہسپتال ٹبہ سلطان پور میں ایک ہی روز میں انکوائری مکمل کرکے جاتے ہوئے کہا تھا کہ کوشش کریں گے کہ10اگست کو حتمی تحقیقاتی رپورٹ جاری کردیں لیکن ابھی تک کوئی حتمی رپورٹ جاری نہ ہوسکی ہے جس کے باعث عوام تحقیقاتی کمیٹی سے مکمل طور پر مایوس ہوچکے ہیں ایک کروڑ 20لاکھ روپے کے بوگس بلوں اور تحقیقاتی کمیٹی سے متعلق انکشاف سامنے آنے کے باوجود ڈپٹی کمشنر وہاڑی کی جانب سے مسلسل خاموشی اختیار کی جارہی ہے اور کوئی بھی پریس ریلز ابھی تک جاری نہیں کی گئی علاقہ کی مختلف تنظیموں کے افرادنے شدید احتجاج کرتے ہوئے نیب کے اعلیٰ حکام، وزیراعلیٰ پنجا ب، انٹی کرپشن حکام، صوبائی وزیر صحت اور کمشنر ملتان سے مطالبہ کیاہے کہ تحقیقاتی کمیٹی سے متعلق ہو نے والے انکشافات اور ہسپتال میں عملہ کی جانب سے بوگس بل بنا کر قومی خزانہ سے ایک کروڑ20لاکھ روپے نکلوانے کی شفاف تحقیقات کے لئے اعلیٰ سطح پر تحقیقاتی کمیٹی تشکیل دی جائے۔  

تیاریاں مکمل

مزید :

ملتان صفحہ آخر -