سٹیٹ کی ذمہ داری بنتی ہے کہ شہریوں کاتحفظ کرے،اسلام آبادہائیکورٹ کے لاپتہ شہری کے کیس میں ریمارکس

سٹیٹ کی ذمہ داری بنتی ہے کہ شہریوں کاتحفظ کرے،اسلام آبادہائیکورٹ کے لاپتہ ...
سٹیٹ کی ذمہ داری بنتی ہے کہ شہریوں کاتحفظ کرے،اسلام آبادہائیکورٹ کے لاپتہ شہری کے کیس میں ریمارکس

  

اسلام آباد(ڈیلی پاکستان آن لائن)لاپتہ شہری کی بازیابی کیلئے دائر درخواست پرچیف جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیتے ہوئے کہاکہ سٹیٹ کی ذمہ داری بنتی ہے کہ شہریوں کاتحفظ کرے،عدالت نے تمام فریقین کو جامع رپورٹ کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کیس کی سماعت غیر معینہ مدت کیلئے ملتوی کردی ۔

اسلام آبادہائیکورٹ میں لاپتہ شہری عمرا ن کی بازیابی کیلئے دائر درخواست پر سماعت ہوئی،چیف جسٹس اطہر من اللہ نے استفسار کیاکہ اس کیس کاکیابنا؟،نمائندہ اسلام آبادپولیس نے کہاکہ اس کیس میں جامع رپورٹ جمع کرنے کیلئے وقت چاہئے ۔

چیف جسٹس ہائیکورٹ نے استفسار کیاکہ وزارت دفاع اور وزارت داخلہ سے کون ہے ؟،مسنگ پرسنز کمیشن میں سپریم کورٹ کا جج موجود ہے ،نمائندہ وزارت دفاع نے کہاکہ اپنے جواب میںکہاہوا ہے کہ لاپتہ شہری ہمارے پاس نہیں ہے ۔

چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہاکہ آپ کاکام نہیں کہ عدالت کو بتائیں کہ بندہ ہمارے پاس نہیں ،سٹیٹ کی ذمہ داری بنتی ہے کہ شہریوں کاتحفظ کرے۔

وزارت دفاع اور آئی بی نے شہری کے لاپتہ ہونے سے لاتعلقی ظاہر کی ،ڈپٹی اٹارنی جنرل طیب شاہ نے کہاکہ لاپتہ شہری کسی دور میں جہاد پر بھی گئے تھے،چیف جسٹس اطہر من اللہ نے کہاکہ کمیشن میں توکہاگیا ہے کہ جبری گمشدگی ہے ،اگرکمیشن کی رپورٹ غلط ہے تو پھر کمیشن کو بندکیاجائے ۔ عدالت نے تمام فریقین کو جامع رپورٹ کرنے کی ہدایت کرتے ہوئے کیس کی سماعت غیر معینہ مدت کیلئے ملتوی کردی ۔

مزید :

قومی -علاقائی -اسلام آباد -