مریم نواز نے بالآخر اب تک خاموش رہنے کی وجہ بتا دی

 مریم نواز نے بالآخر اب تک خاموش رہنے کی وجہ بتا دی
 مریم نواز نے بالآخر اب تک خاموش رہنے کی وجہ بتا دی

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے بالآخر اتنا عرصہ خاموش رہنے کی وجہ بتادی اور کہا کہ وہ والد کے علاج میں کوئی خلل نہیں چاہتی تھیں، بولنا آسان اور خاموش رہنا مشکل ہے لیکن میں عوام کی نمائندگی کررہی تھی ۔

پریس کانفرنس کے دوران صحافی کے سوال آپ پہلے خاموش رہیں اور اب بولتی چلی جارہی ہیں کے جواب میں مریم نوازشریف نے کہا کہ " کوٹ لکھپت جیل سے مجھے سروسز ہسپتال لایاگیا تو ڈاکٹروں کی میٹنگ چل رہی تھی ،ڈاکٹر نے میرے سامنے کہا، میاں صاحب،  آتے ہوئے سوچتے ہیں کہ دوبارہ دیکھیں گے یا نہیں، ان کی یہ حالت تھی،میں چشم دید گواہ ہوں، والدہ  کی وفات کے بعد میں ہی تھی لیکن ان کیساتھ سوچے سمجھے منصوبے کے تحت نہیں جانے دیا گیا،مجھے یہاں یرغمال بنایا گیا، خطرہ تھا کہ  اگر کوئی بات کروں تو وہ نقصان پہنچانے کی کوشش کریں گے ، علاج نہیں ہوگا۔

ان کا کہناتھا کہ " ان کی ایک شریان آج بھی نوے فیصد بند ہے ، پہلے میرے  اتنظار کی وجہ سے سرجری نہیں ہوئی ،  میں اپنا کچھ ایسا کرکے ان کے علاج میں خلل نہیں چاہتی تھی، وہ میرے والد نہیں بلکہ  قوم کا سرمایہ ہیں،ہمیں زندہ لیڈر چاہیے ، لیڈروں کی لاشیں نہیں۔ ان کا مزید کہنا تھاکہ میں عوام کی نمائندگی کررہی تھی ، ذمہ داری کا مظاہرہ کررہی تھی ، خاموش اور کبھی بول کر ایکسپوز کیا، ورنہ ان لوگوں میں جراثیم موجود ہیں کہ وہ کل یہ کہتے کہ دودھ اور شہد کی نہریں بہانا چاہتے تھے لیکن اپوزیشن نے نہیں کرنے دیا،  آج پتہ چلا کہ میاں صاحب کی خاموشی اتنی گونج رہی ہے کہ کانوں پر ہاتھ رکھنا پڑا۔ 

مزید :

ڈیلی بائیٹس -