حمل کے دوران چرس کا استعمال کرنے والی خواتین کو سائنسدانوں نے سختی سے خبردار کردیا

حمل کے دوران چرس کا استعمال کرنے والی خواتین کو سائنسدانوں نے سختی سے خبردار ...
حمل کے دوران چرس کا استعمال کرنے والی خواتین کو سائنسدانوں نے سختی سے خبردار کردیا

  

اوٹاوا(مانیٹرنگ ڈیسک) منشیات کا استعمال زندگی میں کسی بھی مرحلے پر سود مند نہیں ہو سکتا، چہ جائیکہ حاملہ خواتین منشیات استعمال کریں اور پھر صحت مند بچے کی پیدائش کی توقع رکھیں۔ اب کینیڈین سائنسدانوں نے حاملہ خواتین کے منشیات استعمال کرنے کا ان کے ہاں پیدا ہونے والے بچوں کے لیے انتہائی خوفناک نقصان بتا دیا ہے۔ میل آن لائن کے مطابق یونیورسٹی آف اوٹاوا کے سائنسدانوں نے 2200حاملہ خواتین پر تحقیق کے بعد بتایا ہے کہ جو خواتین دوران حمل چرس کا استعمال کرتی ہیں ان کے ہاں پیدا ہونے والے بچوں کے خود فکری کی بیماری ’آٹزم‘ میں مبتلا ہونے کا خطرہ کئی گنا زیادہ ہوتا ہے۔

اس تحقیق میں شامل جتنی خواتین دوران حمل چرس کا استعمال کرتی تھیں ان کے ہاں پیدا ہونے والے بچوں کے آٹزم میں مبتلا ہونے کی شرح 4فی ہزار کس سال سے زائد پائی گئی۔ دوسری طرف نشہ نہ کرنے والی خواتین کے بچوں میں یہ شرح صرف 2.42پائی گئی۔تحقیقاتی ٹیم کے سربراہ پروفیسر مارک واکر کا کہنا تھا کہ ”بچوں کی صحت پر یہ منفی اثر صرف چرس پینے سے ہی نہیں ہوتا، بھنگ اور دیگر منشیات بھی حاملہ خواتین کے پیٹ میں پرورش پاتے بچوں کی ذہنی و نفسیاتی صحت پر انتہائی مضراثرات مرتب کرتی ہے۔ “

مزید :

تعلیم و صحت -